.

پیوتن سے ملاقات میں نیتنیاہو شام میں ایرانی وجود پر تشویش ظاہر کریں گے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

اسرائیلی وزیراعظم بنیامین نیتنیاہو آج بحر احمر پر واقع روسی شہر سوچی میں روسی صدر ولادیمر پیوتن سے اہم ملاقات کر رہے ہیں جو گزشتہ دو برسوں کے دوران دونوں شخصیات کے درمیان ہونے والی چھٹی ملاقات ہے۔

اس موقع پر نیتینیاہو ایک دشوار مہم کے سلسلے میں پیوتن کو اس بات پر قائل کرنے کی کوشش کریں گے کہ واشنگٹن اور ماسکو کے درمیان شام میں فائر بندی کے حوالے سامنے آنے والی مفاہمت میں سے ایران اور حزب اللہ کو باہر کیا جائے. اس کے علاوہ ایران کو شام میں گولان کے علاقے میں اسرائیل کے خلاف کسی بھی سرگرم عسکری محاذ کے قائم کرنے سے روکا جائے۔

اس سے قبل اسرائیلی عسکری ذرائع نے خبردار کیا تھا کہ ایران کی جانب سے روس کی طرز پر شام کے اندر اپنے فوجی اڈے اور فوجی بندرگاہیں قائم کرنے ، شام میں دور مار کرنے والے میزائلوں کا کارخانہ بنانے اور ایران سے گولان تک زمینی امدادی سپلائی لائن کو یقینی بنانے سے مساوات یکسر تبدیل ہو جائے گی۔ اس کے نتیجے میں اسرائیلی فوجی کارروائی عمل میں آ سکتی ہے جس سے شمالی شام اور لبنان کے محاذوں پر جنگ چھڑنے کا خطرہ ہو گا۔


واضح رہے کہ اسرائیل کا ایک سکیورٹی وفد چند روز قبل واشنگٹن سے واپس لوٹا تھا جہاں وہ امریکیوں کو اس بات پر قائل کرنے میں ناکام رہا کہ داعش کے بعد کے مرحلے کے لیے روس کے کھاتے میں شام سے ایران اور حزب اللہ کو باہر کیا جائے۔