.

فرانس میں نیا اسکینڈل : صدر ماکروں کے بناؤ سنگھار پر 31 ہزار ڈالر خرچ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

فرانس میں سوشل میڈیا پر "میک اپ اسکینڈل" کے نام سے ایک نیا شوشہ وسیع پیمانے پر گردش میں ہے۔ مذکورہ اسکینڈل کا بنیادی سبب معروف خاتون میک اپ آرٹسٹ "نتاشا ایم" کی جانب سے صدارتی محل میں پیش کی جانے والی دو بلوں کی رسیدیں ہیں۔

جمعرات کے روز سب سے پہلے اس خبر کو "لو بوان" نامی فرانسیسی جریدے نے شائع کیا۔ اس کے بعد گویا یہ خبر جنگل کی آگ کی طرح تمام فرانسیسی میڈیا میں پھیل گئی۔ اس دوران فرانس کے نوجوان صدر امانوئل ماکروں کو شدید تنقید کا نشانہ بنایا جا رہا ہے جنہوں نے صرف 3 ماہ کے دوران "بناؤ سنگھار" کی مد میں 26 ہزار یورو یعنی 31 ہزار ڈالر کے قریب خرچ کر ڈالے۔

اس سے بڑی قیامت پیرس میں صدارتی محل کی جانب سے سامنے آنے والے جواب نے برپا کر دی۔ اس حوالے سے جاری بیان میں "معمول کی میک اپ پالیسی" کا دفاع کرنے کی کوشش کی گئی۔ بیان میں "اسکینڈل" کی تصدیق کرتے ہوئے کہا گیا کہ صدر فوری طور پر میک اپ ماہر کی خدمات حاصل کرنے پر مجبور ہوئے جس کے نتیجے میں اخراجات میں اضافہ ہو گیا اور مستقبل میں ایسا نہیں ہو گا۔

دوسری جانب اس جواب کے بعد بعض فرانسیسی حلقوں کے غیض و غضب میں اضافہ ہو گیا بالخصوص جب کہ صدر ماکروں نے اخراجات میں کمی کی پالیسی کا اعلان کیا تھا۔

اس دوران بعض لوگوں نے استفسار کیا ہے کہ صدر کو میک اپ کی کیا ضرورت پیش آ گئی جب کہ دیگر بعض نے حیرت سے پوچھا ہے کہ یہ کس طرح ممکن ہے کہ خاتونِ اوّل اپنے میک اپ پر صدر سے کم رقم خرچ کریں ؟

یاد رہے کہ ماکروں وہ اکلوتے فرانسیسی صدر نہیں جنہوں نے اپنے "بناؤ سنگھار" پر یہ رقم خرچ کی ہے۔ ان سے قبل اس مد میں فرانسوا اولاند 30 ہزار اور نکولا سارکوزی 24 ہزار یورو خرچ کر چکے ہیں۔