.

"قات" بُوٹی کی خاطر سوئٹزرلینڈ چھوڑ دینے والا یمنی نوجوان

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سوئٹزرلینڈ میں سکونت پذیر یمنی نوجوان نجیب الحجی اس خوب صورت یورپی ملک میں ہی زندگی کا سفر جاری رکھ سکتا تھا تاہم اس نے ایک عظیم مقصد کی خاطر یمن لوٹنا پسند کیا۔ نجیب کا پیغام ہے کہ "قات چھوڑ دیجیے آپ ایک بہتر انسان بن جائیں گے"۔ (قات ایک خاص قسم کی نشہ آور بُوٹی ہے جو یمن میں بکثرت استعمال ہوتی ہے)۔ نجیب اپنے اس پیغام تک محدود نہیں رہا بلکہ اس نے قات اور ہتھیار چھوڑنے سے متعلق پہلا کفالتی منصوبہ بھی متعارف کرایا ہے جس کو "ارجوانی بیاہ" کا نام دیا گیا ہے۔

نجیب الحجی جو "قات چھوڑیے" نامی مہم کا بانی بھی ہے اس نے العربیہ ڈاٹ نیٹ سے گفتگو کرتے ہوئے بتایا کہ "ارجوانی بیاہ کا خیال درحقیقت ایک نئی شہری کفالتی اخلاقی روش ہے جو اعلانیہ طور پر قات چھوڑنے میں مددگار ثابت ہو گی۔ اس منصوبے کے تحت مالی طور پر کمزور 6 دولہاؤں کے اخراجات کی کفالت کی جائے گی جو شادی کی تقریب میں اس شرط کے ساتھ شریک ہوں گے کہ وہ متبادل کی فراہمی کے ساتھ قات اور اسلحے کی نمائش کو چھوڑ دیں گے"۔

نجیب کے مطابق (6+1) پر مشتمل اس تقریب میں مزاحیہ خاکے اور ایسی سرگرمیاں شامل ہیں جن کا مقصد شادی کی تقریبات میں مروجہ روش اور بالخصوص قات کے استعمال کے رجحان کو تبدیل کرنا ہے۔ علاوہ ازیں تقریب میں "قات چھوڑیے" مہم کی جانب سے متعدد مالی انعامات دیے جانے کا سلسلہ بھی شامل ہے۔

نجیب نے بتایا کہ " میں سوئٹزرلینڈ سے ایک تھکا دینے والے سفر کے بعد آج یہاں یمن کی سرزمین پر موجود ہوں تا کہ لوگوں کو تقریب میں شرکت کی دعوت دینے کے بعد میں براہ راست رابطے میں آ سکوں۔ میں نے پمفلٹس بھی تقسیم کیے ہیں جن میں نوجوانوں پر زور دیا ہے کہ وہ وہ قات کی لت سے آزاد ہوں۔ یقینا جنگ اور امن و امان کی صورت حال کے سبب کافی اندیشے تھے تاہم ہم امید کرتے ہیں کہ مستقبل میں قات کو چھوڑنے کے لیے چلائی جانے والی مہم کے لیے اور بہتر انداز سے کام کر سکیں گے"۔

اس حوالے سے یمن کے مشرق میں حضرت موت کے ساحلی ضلعوں میں سکیورٹی حکام نے فرائض کی انجام دہی کے سرکاری اوقات کے دوران اپنی فورسز پر نشہ آور بوٹی قات کے استعمال پر پابندی عائد کر دی ہے۔

قات کو ایک نشہ آور بُوٹی شمار کیا جاتا ہے اور یمنیوں کی بڑی تعداد اس کی لت میں مبتلا ہے۔ طبی مطالعوں سے یہ بات ثابت ہوئی ہے کہ قات بُوٹی میں پایا جانے والا کیمیائی مواد اچانک دل کا دورہ پڑنے کے امکانات اور سرطان کے مرض سے متاثرہ افراد کی شرح کو بڑھا دیتا ہے۔

قات یمن کے بہت سے علاقوں میں پیدا ہوتی ہے۔ یمنی باشندے اس کو چبا کر کھاتے ہیں اور اس دوران کئی گھنٹے اس کو اپنے مُنہ کے اندر جمع رکھتے ہیں۔