.

بھارت : سوئمنگ پول میں بجلی کے جھٹکے سے سعودی بچے کی موت

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

بھارت کے ساحلی سیاحتی مقام کمارا کوم میں ایک سعودی بچہ سوئمنگ پول میں اچانک بجلی کا کرنٹ آجانے سے جان کی بازی ہار گیا ہے۔

بھارتی پولیس نے چار سالہ سعودی بچے علاء الدین ماجد ابراہیم کی اس طرح اچانک موت کی تحقیقات شروع کردی ہے۔اس بچے کے والد کا کہنا ہے کہ وہ طبعی موت نہیں مرا بلکہ اس کو قتل کیا گیا ہے۔انھوں نے ہوٹل کی انتظامیہ کو واقعے کا ذمے دار قرار دیا ہے۔

متوفی کے والد ماجد ابراہیم کا جدہ سے تعلق ہے۔انھوں نے ایشیا نیٹ نیوز چینل سے گفتگو کرتے ہوئے کہا ہے کہ ان کے بچے کی بجلی کے جھٹکے سے موت ہوئی ہے کیونکہ ایک شخص نے اس کو بچوں کے تالاب سے نکالنے کی کوشش کی تھی لیکن اس کو بھی کرنٹ لگا تھا اور جب اس نے دوبارہ کوشش کی تو تب تک بچہ بے حس وحرکت ہوچکا تھا۔

بھارتی اخبار نیو انڈین ایکسپریس کی رپورٹ کے مطابق کمارا کوم کے علاقے امان کرے میں واقع ایک ہوٹل میں یہ واقعہ جمعرات کی شام ساڑھے چھے بجے پیش آیا تھا اور ممبئی میں سعودی قونصل خانے نے بھی اس واقعے میں مبینہ طور پر مداخلت کی ہے۔

پوسٹ مارٹم رپورٹ سے بچے کی سوئمنگ پول میں ڈوب کر موت کی تصدیق ہوئی ہے لیکن پولیس نے یہ بھی اطلاع دی ہے کہ جس شخص نے اس بچے کو پانی سے باہر نکالنے کی کوشش کی تھی،اس کو بجلی کا جھٹکا لگا تھا۔اس نے سوئمنگ پول کے نزدیک بجلی کے ایک تار کے پڑے ہونے کی بھی اطلاع دی ہے۔اس نے اس کی فلم بنا لی تھی اور اس کو پولیس کے حوالے کردیا ہے۔

ایک پولیس افسر کا کہنا ہے کہ سعودی بچہ اچانک سوئمنگ پول میں گرا تھا اور اس وقت دو اور بچے بھی اس میں موجود تھے۔اس کم سن کو فوری طور پر اسپتال لے جایا گیا تھا لیکن وہ اس وقت تک موت کے منھ میں جا چکا تھا۔

سوئمنگ پول میں بجلی کے جھٹکے سے جاں بحق ہونے والے بچے کی میت
سوئمنگ پول میں بجلی کے جھٹکے سے جاں بحق ہونے والے بچے کی میت
متوفی بچے کے والد ماجد ابراہیم  نے ہوٹل انتظامیہ کو واقعے کی ذمے دار قرار دیا ہے۔
متوفی بچے کے والد ماجد ابراہیم نے ہوٹل انتظامیہ کو واقعے کی ذمے دار قرار دیا ہے۔