قطر بحران دوسال اورجاری رہتاہے تو کچھ فرق نہیں پڑے گا: عادل الجبیر

ایران حزب اللہ اور دہشت گردی کے حملوں کے ذریعے خطے کو عدم استحکام سے دوچار کررہا ہے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سعودی عرب کے وزیر خارجہ عادل الجبیر نے کہا ہے کہ اگر قطر بحران مزید دوسال بھی جاری رہتا ہے تو اس سے کچھ فرق نہیں پڑے گا۔انھوں نے یہ بات زور دے کر کہی ہے کہ قطری عوام کو اپنے حکمرانوں کے بارے میں فیصلے کا حق حاصل ہے۔

انھوں نے منگل کے روز ایک بیان میں یمن میں جاری بحران کے حوالے سے کہا ہے کہ ’’ ہم نے جنگ کا انتخاب نہیں کیا تھا بلکہ یہ جنگ ہم پر مسلط کی گئی تھی‘‘۔ انھوں نے اس بات کا بھی اشارہ دیا ہے کہ اگر اقوام متحدہ صنعاء کے بین الاقوامی ہوائی اڈے کا انتظام سنبھال لے تو اس کو دوبارہ کھولا جا سکتا ہے۔

عادل الجبیر نے کہا ہے کہ ایران حزب اللہ اور دہشت گردی کے حملوں کے ذریعے خطے کو عدم استحکام سے دوچار کررہا ہے۔ان کا کہنا تھا کہ ایرانی وزیر خارجہ جواد ظریف کے مصالحت سے متعلق بیانات مضحکہ خیز ہیں۔

انھوں نے واضح کیا کہ’’ اگر ایران سعودی عرب کے ساتھ تعلقات میں بہتری چاہتا ہے تو وہ دہشت گردی اور دوسرے ممالک میں مداخلت کا سلسلہ بند کر دے‘‘۔ان کے بہ قول ایران میں موجود القاعدہ کے لیڈر سعودی عرب میں حملوں کے احکامات جاری کررہے ہیں۔

سعودی وزیر خارجہ کا کہنا تھا کہ ’’ ہم نے ایران کی جانب سے مذاکرات اور سفارتی تعاون کے ضمن میں کوئی سنجیدگی ملاحظہ نہیں کی ہے‘‘۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں