.

ایران اب بھی دنیا میں دہشت گردی کا سب سے بڑا سپورٹر ہے: واشنگٹن

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

امریکی وزارت خارجہ میں انسداد دہشت گردی کے رابطہ کار نیتھن سیلز کا کہنا ہے کہ "ایران اب بھی دنیا بھر میں دہشت گردی کا سب سے بڑا سپورٹر ہے"۔

جمعے کے روز امریکی ایوان نمائندگان میں انسداد دہشت گردی کی ذیلی کمیٹی کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے سیلز نے باور کرایا کہ ایران القُدس فورس اور لبنانی ملیشیا حزب اللہ کے ذریعے عدم استحکام پیدا کرنے والی سرگرمیاں انجام دے رہا ہے۔

امریکی وزارت خارجہ میں انسداد دہشت گردی کے رابطہ کار نے مزید کہا کہ "ایرانی نظام شام ، عراق، یمن، بحرین، افغانستان اور لبنان میں متعدد تصادم اور جارحیت کا ذمے دار ہے"۔

سیلز کا یہ بھی کہنا تھا کہ "ایرانی نظام، اس کے زیر انتطام دہشت گرد تنظیمیں اور اس کی نیابت میں کام کرنے والی قوتیں ہر جگہ دہشت گردی کا خطرہ پیدا کر رہی ہیں"۔

امریکی کانگریس کے قانون ساز ارکان اور صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی انتظامیہ کے ذمے داران کا کہنا ہے کہ ایران نے نیوکلیئر معاہدے کے تحت آزاد ہونے والی رقوم کو یمن ، شام اور عراق میں دہشت گردی کی سپورٹ کے لیے استعمال کیا۔ اسی طرح یہ رقم ایران کے اسلحے خانے کو جدید بنانے بالخصوص میزائل پروگرام کی ترقی کے واسطے بھی خرچ کی گئی۔

امریکا کی جانب سے ایران پر نئی پابندیوں کے منصوبوں کا مقصد ایران کی توسیعی پالیسیوں کا محاصرہ کرنا اور اس کی جانب سے علاقائی اور بین الاقوامی امن کو سبوتاژ کرنے کی کوششوں پر روک لگانا ہے۔

کانگریس کے 115 ویں اجلاس میں ایران کے خلاف سزا پر مبنی اکثر منصوبے پیش کیے جائیں گے جن میں غیر نیوکلیئر پابندیاں اور پاسداران انقلاب کو ایک دہشت گرد تنظیم قرار دیا جانا شامل ہوگا۔