تصاویر کے آئینے میں: مٹی سے بنایا گیا دنیا کا بلند ترین مینار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

یمن کے صوبے حضرموت کے شہر تریم میں واقع مسجد المحضار کا مینار دنیا بھر میں مٹی سے بنایا گیا بلند ترین مینار شمار کیا جاتا ہے۔ سال 1823 میں تعمیر کی جانے والی مسجد کے مینار کی اونچائی 50 میٹر ہے۔

یمن کے شہر تریم کو علم و معرفت کے مرکز کے طور پر چھٹی صدی ہجری سے شہرت حاصل ہوئی۔ یمن کے مختلف علاقوں ، پڑوسی ممالک ، مشرق بعید اور مشرقی افریقہ سے طالبانِ علم تریم کا رخ کرتے ہیں تا کہ یہاں کے فاضل علماء کرام سے شرعی علوم حاصل کر سکیں۔

تریم شہر کو 2010 میں اسلامی ثقافت کے دارالحکومت کے طور پر منتخب کیا گیا۔ یہ شہر اپنے اسلامی اور تاریخی مقامات کے سبب مشہور ہے۔ یہاں 360 مساجد واقع ہیں جو یمنی طرز تعمیر کا اظہار کرتی ہیں۔ ان مساجد میں مسجد المحضار بھی شامل ہے جس کو دنیا بھر میں مٹی کے بلند ترین مینار کے سبب شہرت حاصل ہے۔

مسجد المحضار کو اس کے بانی امام شیخ عمر المحضار بن عبدالرحمن السقاف سے منسوب کیا جاتا ہے۔ یہ مسجد ابتدائی طور پر 63×93 فٹ کے رقبے پر بنائی گئی۔ بعد ازاں اس کو وسعت دی گئی اور تیرہویں صدی ہجری کے اواخر میں اس کی از سرِ نو تجدید کی گئی۔

مسجد کی عمارت جدت کی حامل ہے اور اس کے مختلف مقامات پر انتہائی خوب صورت نقوش کندہ ہیں۔ قبلے کی سمت اس کا عظیم الشان مینار واقع ہے جس کی اونچائی 175 فٹ ہے۔ یہ مینار مٹی اور کھجور کے تنوں سے بنایا گیا۔

تاریخی ذرائع کے مطابق مذکورہ مینار کو چودہویں صدی ہجری کے اوائل میں تعمیر کیا گیا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں