.

میکسیکو : زلزلے میں ہلاکتوں کی تعداد 200 سے زیادہ ، 20 لاکھ بے گھر

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

میکسیکو میں منگل کی صبح آنے والے زور دار زلزلے نے لوگوں کے اندر شدید خوف و ہراس پھیلا دیا ہے۔ ریکٹر اسکیل پر زلزلے کی شدت 7.1 رہی۔ حکام کے مطابق اب تک 200 سے زیادہ افراد ہلاک ہو چکے ہیں جن میں اکثریت کا تعلق دارالحکومت میکسیکو سٹی کے جنوب میں واقع ریاست مورلس سے ہے۔ دو ہفتوں کے اندر میکسیکو میں یہ دوسرا زلزلہ ہے۔ اس سے قبل 7 ستمبر کو بھی میکسیکو کے جنوب مغربی حصے میں 8.1 شدت کا زلزلہ آیا تھا جس کے نتیجے میں 97 افراد ہلاک اور 25 لاکھ بے گھر ہو گئے۔

واضح رہے کہ میکسیکو میں گزشتہ 8 دہائیوں میں شدید ترین زلزلہ 1985 میں آیا تھا جب دارالحکومت میں بہت سے علاقے تباہی کے بعد ہموار ہو گئے تھے۔ اس قدرتی آفت میں موت کے منہ میں جانے والے افراد کی تعداد 10 ہزار تھی۔

امریکی ارضیاتی سروے اور میکسیکو کے زلزلہ مرکز کے مطابق گزشتہ روز آنے والے زلزلے کا مرکز دارالحکومت سے 121 کلومیٹر دور قصبےRaboso کے قریب تھا۔ زلزلنے کے نتیجے میں دارالحکومت میکسیکو سٹی میں بلند عمارتیں زمین بوس ہو چکی ہیں جب کہ کم از کم 38 لاکھ افراد بجلی سے محروم ہو گئے ہیں۔

زلزلے کے سبب شہر میں بھاری مالی نقصان بھی ہوا ہے جب کہ گیس کے اخراج کے سبب بعض عمارتوں میں آگ لگ گئی اور لوگ ان کے اندر محصور ہیں۔ ہزاروں لوگ مزید آتش زدگی کے خوف سے نقل مکانی کر گئے ہیں۔ امریکی صدر کو صورت حال کا علم ہوا تو انہوں نے فورا اپنے ٹوئیٹر اکاؤنٹ پر ٹوئیٹ میں تعزیتی پیغام جاری کیا اور کہا کہ " ہم آپ کے ساتھ ہیں اور آپ کی خاطر وہاں پر موجود ہوں گے"۔ ٹرمپ کا اشارہ امریکا کی جانب سے سپورٹ پیش کیے جانے کے ارادے کی طرف تھا۔

زلزلے کے سبب شہروں اور قصبوں میں ہزاروں افراد اپنے گھروں اور کام کے مقامات سے نکل کر سڑکوں پر آ گئے۔ یہاں "العربیہ ڈاٹ نیٹ" نے میکسیکو کے ایک اخبار کے یوٹیوب چینل سے وڈیو لے کر پیش کی ہے جس میں ہم 4 منزلہ عمارت کو منہدم ہوتا دیکھ سکتے ہیں۔ ایک دوسری عمارت کا کچھ حصہ گرا جب کہ تیسری عمارت جو 6 منزلوں پر مشتمل تھی وہ مکمل طور پر زمین بوس ہو گئی۔ اسی وڈیو کے ایک اور منظر میں دھماکے کے ساتھ اچانک آگ بھڑکتی ہوئی نظر آ رہی ہے۔ لوگ افراتفری اور بدحواسی کے عالم میں ادھر سے ادھر بھاگتے ہوئے نظر آ رہے ہیں۔ اس کے بعد ایک دریا کا منظر ہے جس کے پانی میں زلزلے کے سبب ارتعاش دیکھا گیا گویا کہ کوئی آندھی آ گئی ہے۔

ایک دوسری وڈیو میں ہم 2 کروڑ آبادی والے شہر میکسیکو سٹی میں مقیم افراد کو خوف و دہشت کے عالم میں کھلے میدانوں کی طرف نکل کر بھاگتے ہوئے دیکھ سکتے ہیں۔ زلزلے سے دارالحکومت میں 36 عمارتیں مکمل تباہ ہو گئیں جب کہ سیکڑوں کو شدید نقصان پہنچا۔

بدھ کی صبح تک دارالحکومت میں 20 لاکھ افراد بے گھر ہو چکے ہیں۔ اسی وجہ سے میکسیکو میں حکام نے 3600 فوجیوں کو بیرکوں سے نکال کر امدادی کارروائیوں میں شریک ہونے کے لیے بھیجا ہے۔

زلزلے کے باعث درجنوں افراد لا پتہ ہیں ان میں بعض ملبے تلے دبے ہو سکتے ہیں یا پھر ان کے نیچے لاش کی صورت میں موجود ہوں گے۔ لوگوں کے اژدہام اور گاڑیوں کے سبب ایمبولینس کی گاڑیوں کو مطلوبہ مقامات تک پہنچنے میں دشواری کا سامنا ہے۔

حیرت انگیز بات یہ ہے کہ یہ زلزلہ ایسے وقت پر آیا ہے جب میکسیکو میں 1985 میں آنے والے شدید زلزلے کی یاد میں ڈرلز کی جا رہی تھیں۔