مصر میں ملک دشمن عناصر کی شہریت منسوخ کرنے کا قانون

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

مصر کی کابینہ نے ملک میں شہریت سے متعلق ایک قانون میں ترمیم کے بعد منظوری دی ہے جس کے تحت ملک کی سلامتی کے لیے خطرہ بننے یا ریاست مخالف سرگرمیوں میں ملوث افراد کی شہریت منسوخ کی جاسکے گی۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق گذشتہ روز قاہرہ میں وزیراعظم انجینیر شریف اسماعیل کی زیرصدارت اجلاس میں شہریت سے متعلق قانون کی دفعہ 26 مجریہ 1975ء میں ترامیم کی منظوری دی گئی۔

ترمیمی قانون کے تحت اگر کسی شخص کی مصری شہریت کے جعلی ہونے کا پتا چلے تو اس کی شہریت منسوخ کردی جائے گی۔ دھوکہ دہی سے شہریت حاصل کرنے والے، شخص، غیرقانونی سرگرمیوں کے لیے تنظیم کے قیام، ملک کے خلاف سرگرمیوں میں ملوث ہونے والے افراد چاہے ان کے دفاتر اندرون ملک یوں یا بیرون ملک، ریاستی نظام میں خلل ڈالنے کی سازشیں کرنے والے، سماجی، اقتصادی اور سیاسی نظام میں طاقت کے ذریعے ابتری پھیلانے یا ملک کے خلاف کسی دوسرے طریقے سے سرگرمیوں میں ملوث ہونے والے تمام افراد کی مصری شہریت منسوخ کردی جائے گی۔

ترمیمی قانون کے تحت کسی غیرملکی کو شہریت دینے کی سابقہ پالیسی کے میں تبدیلی کرتے ہوئے ملک میں قیام کی مدت 5 سال سے بڑھا کر 10 سال کردی گئی ہے۔ اسی طرح جس شخص کی والدہ مصری ہے اسے مصر کی شہریت ایک سال کے بجائے دو سال کے قیام کے بعد مل سکے گی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں