.

باغی ایران کا توسیع پسندانہ ایجنڈ آگے بڑھا رہے ہیں: منصور ھادی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یمن کے آئینی صدر عبد ربہ منصور ھادی نے الزام عاید کیا ہے کہ ان کے ملک میں سرگرم حوثی باغی اور سابق معزول صدر علی عبداللہ صالح خطے میں توسیع پسندانہ ایرانی ایجنڈے پر کام کر رہے ہیں۔

اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی سے خطاب میں انہوں نے کہا کہ ایران، یمن کی باغی عسکری گروپوں کو اسلحہ، میزائل اور رقوم مہیا کر رہا ہے اور یہ غیر قنونی ملیشیائیں خطے کی سلامتی اور عالمی جہاز رانی کے لیے خطرہ ہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ حوثیوں اور صالح کے حامیوں نے یمنی قوم پر جنگ مسلط کرکے سیاسی بات چیت کا راستہ بند کر رکھا ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ یمن کا مسئلہ صرف سیاسی اختلافات تک محدود نہیں بلکہ انتہا پسندانہ نظریات مسلط کرنے کی کوششیں بھی اس تنازع کا حصہ ہیں۔

صدر ھادی نےا لزام عاید کیا کہ باغیوں نے ملک کا مرکزی بنک لوٹا، شہریوں کی املاک پر ہاتھ صاف کیے اور بڑے پیمانے پر تباہی و بربادی پھیلائی جس کے نتیجے میں یمنی عوام کی زندگی تباہ ہو کر رہ گئی ہے۔ انہوں نے سلامتی کونسل سے یمنی باغیوں پر دباؤ بڑھانے کا بھی مطالبہ کیا۔

عبد ربہ منصور ھادی کا کہنا تھا کہ ہم یمن میں دی پر امن وامان اور منصفانہ سیاسی نظام کے قیام کے لیے کوشاں ہیں جس میں پوری یمنی قوم کو ان کے حقوق فراہم کیے جاسکیں۔