.

کردستان کے ریفرنڈم کے نتائج تسلیم نہیں کریں گے: تُرک وزیراعظم

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ترک وزیراعظم بن علی یلدرم کا کہنا ہے کہ ان کا ملک عراقی کردستان کے ریفرنڈم کے نتائج کو ہر گز تسلیم نہیں کرے گا۔ انہوں نے کہا کہ مرکزی سرحدی گزرگاہوں ، ہوائی اڈوں اور تیل کی پائپ لائنوں کا کنٹرول عراق کی مرکزی حکومت حاصل کر لے گی۔

ترک وزارت خارجہ کی جانب سے جاری بیان میں عراقی کردستان کے ریفرنڈم کو کالعدم قرار دیتے ہوئے کہا گیا ہے کہ اس ریفرنڈم سے خطے کا امن و استحکام خطرے میں پڑ جائے گا۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ اگر ریفرنڈم کے نتیجے میں ایسی کارروائیاں سامنے آئیں جن سے ترکی کا امن نشانہ بنا تو انقرہ حکومت تمام تر اقدامات کرے گی۔

ترک وزارت خارجہ نے اپنے شہریوں کو ہدایت کی ہے کہ وہ جلد از جلد عراقی کردستان سے کوچ کر جائیں۔

شمالی عراق کے ریجن کردستان کی علاحدگی کے حوالے سے ریفرنڈم میں رائے شماری پیر کے روز شروع ہو گئی۔ اس دوران علاقائی اور بین الاقوامی اندیشے بدستور موجود ہیں کہ ریفرنڈم کے نتیجے میں مشرق وسطی کا امن و استحکام متزلزل ہو گا۔

ریفرنڈم میں رائے شماری کے لیے پولنگ مراکز کو پیر کی صبح مقامی وقت کے مطابق آٹھ بجے کھول دیا گیا تھا اور پولنگ کا سلسلہ شام چھ بجے تک چلتا رہے گا۔ ریفرنڈم کے حتمی نتائج کا اعلان 72 گھنٹوں کے دوران کر دیا جائے گا۔