.

یمن کے حوثی باغی تین روز میں دوسرے اہم کمانڈر سے محروم

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یمن کی سرکاری کی جانب سے جاری کردہ ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ حوثی باغی تین روز میں مزید ایک اور اہم کمانڈر سے محروم کردیے گئے ہیں۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق آئینی فوج کی طرف سے جاری کردہ ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ عرب اتحادی فوج کے طیاروں نے شمالی مغربی گورنری حجہ میں حوثیوں کے ٹھکانوں پر بمباری کی، جس کے نتیجے میں ایک اہم کمانڈر سمیت متعدد جنگجو ہلاک اور زخمی ہوگئے۔

سرکاری فوج کے محکمہ اطلاعات کی طرف سےجاری کردہ بیان میں کہا گیا ہے کہ اتوار کو حجہ گورنری کے علاقے حرض میں اتحادی طیاروں کی بمباری کے نتیجے میں اہم حوثی کمانڈر عمار ابنو خرشفہ اپنے کئی ساتھیوں سمیت ہلاک ہوگیا۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ میدی اور حرض کے محاذوں پر حوثی پسندوں اور علی صالح کے خلاف لڑائی جاری ہے۔ تازہ کارروائیوں میں ان دونوں محاذوں پر حوثیوں کو بھاری جانی اور مالی نقصان اٹھانا پڑا ہے۔ باغیوں کے اسلحہ کے متعدد مراکز بھی تباہ کردیے گئے ہیں۔

خیال رہے کہ عمار ابو خرفشہ کو حوثی ملیشیا کی جانب سے حجہ میں مرکزی جنگی کمانڈر مقرر کیا تھا۔ حرض میں تین روز میں یہ دوسرے اہم ترین حوثی کمانڈر کی ہلاکت ہے۔ تین روز پیشتراسی محاذ پراسلحہ اور سامان کی سپلائی کے انچارج سرکردہ حوثی کمانڈر فواد الجبری کو ہلاک کردیا گیا تھا۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کو اپنے ذریعے سے معلومات ملی ہیں کہ مقتول عمار عبداللہ مسفر ابو خرفشہ کا تعلق حوثیوں کے گڑھ سمجھے جانے والی صعدہ گورنری سے تھا اور اس کے حوثی لیدر عبدالملک الحوثی اور ان کے خاندان کے ساتھ بھی اس کے گہرے مراسم تھے۔