یمن : حوثی بھرتی باز کو بیوی نے قتل کرکے لاش چھپا دی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

یمن کے دارالحکومت صنعاء کے جنوب میں واقع گورنری ذمار کے ایک قصبے محضر میں باغی حوثی ملیشیا کے ایک عہدہ دار محمد حسین کرات کو اس کی بیوی نے چاقو گھونپ کر قتل کردیا اور لاش ایک گڑھے میں چھپا دی۔

محضر کے مکینوں نے بتایا ہے کہ مقتول حسین کرات مردوں اور بچوں کو حوثی ملیشیا کے لیے جنگجو کے طور پر بھرتی کیا کرتا تھا اور وہ ہر بھرتی شدہ جنگجو کو دس ہزار ریال دیا کرتا تھا۔

ان مکینوں کے بیان کے مطابق اس حوثی بھرتی باز کی بیوی نے اس کو گردن اور سینے پر چاقو کے پے درپے دس وار کرکے قتل کردیا اور اس کی لاش کپڑوں کی تہ میں لپیٹ دی۔پھر اس نے ایک بس کرائے پر حاصل کی اور لاش لے کر اپنے میکے روانہ ہوگئی۔

وہ اپنے والدین کے گھر سے پہلے اس بس سے اتر گئی اور اپنے خاوند کی لاش کو ایک چھوٹے گڑھے میں دفن کردیا۔بعد میں چرواہوں کو ہفتے کے روز اس کی لاش ملی ہے۔

حوثی ملیشیا نے اپنے بھرتی باز کی موت کی خبر کو چھپانے کی کوشش کی ہے لیکن قصبے سے تعلق رکھنے والے کارکنان نے سوشل میڈیا نیٹ ورکس پر اس کی موت کی خبر جاری کردی اور ساتھ گڑھے سے نکالتے ہوئے لاش کی تصویر بھی پوسٹ کردی ہے۔

فوری طور پر اس قتل کا محرک معلوم نہیں ہوسکا کہ اس عورت نے اپنے خاوند کو کیوں قتل کیا ہے۔ایک مقامی ذریعے نے بتایا ہے کہ حوثی ملیشیا نے کرات کی لاش ملنے کے بعد اس کی قاتلہ بیوی کو گرفتار کر لیا ہے۔اس کے خلاف بس کے ڈرائیور نے بھی بیان دے دیا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں