.

یواے ای: عالمی پابندیوں کی خلاف ورزی کے مرتکب ایرانی کی سزائے قید برقرار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

متحدہ عرب امارات (یو اے ای) میں ایک اپیل عدالت نے ایک ایرانی کو بین الاقوامی پابندیوں کی خلاف ورزی کا مرتکب ہونے کے جرم میں سنائی گئی دس سال قید کی سزا برقرار رکھی ہے۔

یو اے ای کی سرکاری خبررساں ایجنسی وام کے مطابق اسٹیٹ سکیورٹی عدالت نے ایران سے انٹیلی جنس معلومات کے تبادلے ، برطانیہ سے بجلی کے جنریٹر اور آلات درآمد کرنے اور انھیں پھر ایران کو غیر قانونی طور پر برآمد کرنے کے مقدمے میں ماخوذ شخص کے خلاف ماتحت عدالت کا فیصلہ برقرار رکھا ہے۔

اس ایرانی کی شناخت نہیں بتائی گئی ہے۔اس کو اپریل میں ایک ماتحت عدالت نے مذکورہ الزامات میں قصور وار قرار دے کر دس سال قید کی سزا سنائی تھی اور جیل کی یہ مدت پوری ہونے کے بعد اس کو ملک بدر کرنے کا حکم دیا تھا۔

یہ ایرانی متحدہ عرب امارات میں دوسرے ملکوں کے ساتھ اشیاء کی درآمد اور برآمد کا کاروبار کرنے والی ایک تجارتی کمپنی میں مینجر تھا اور اس نے مبینہ طور پر بیرون ملک سے ایک ڈیوائس یو اے ای میں استعمال کرنے کے لیے درآمد کی تھی۔بعد میں اس نے مبینہ طور پر یہ ڈیوائس ایران کو برآمد کردی تھی اور اس طرح وہ ایران پر عاید بین الاقوامی پابندیوں کی خلاف ورزی کا مرتکب ہوا تھا۔

واضح رہے کہ ایران اور امریکا کی قیادت میں چھے بڑی طاقتوں کے درمیان جولائی 2015ء میں تاریخی جوہری معاہدہ طے پایا تھا ۔اس کے تحت ایران کے خلاف عاید بہت سی عالمی پابندیاں ہٹا لی گئی تھیں لیکن امریکا کی ایران پر عاید کردہ بعض پابندیاں برقرار ہیں اور اس نے حال ہی میں میزائل تجربات پر ایران کے خلاف نئی پابندیاں بھی عاید کی ہیں ۔