.

سعودی عرب کی مساعی سے سوڈان پر امریکی پابندیاں ختم

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کی جانب سے کی جانے والی کوششوں کے بعد امریکا نے افریقی عرب ملک سوڈان پر 20 سال سے عاید اقتصادی پابندیاں اٹھانے کا اعلان کیا ہے۔

سابق امریکی صدر براک اوباما نے سوڈان پر عاید پابندیاں جزوی طور پر اٹھانے کا اعلان کیا تھا۔ وائیٹ ہاؤس سے نکلنے سے قبل وہ اپنے فیصلے میں کامیاب رہے تھے اور خرطوم پر عاید کی گئی بعض پابندیاں اٹھا دی تھیں تاہم اس کے باوجود سوڈان ’دہشت گردی کے سرپرست‘ قرار دیے جانے والے ممالک کی فہرست میں شامل رہا۔ گذشتہ جمعہ کو امریکی حکومت نے خرطوم پر عاید کی گئی اقتصادی پابندیاں ختم کردیں تاہم سوڈان کو اسلحہ کی فراہمی پر عاید کی گئی پابندیاں برقرار رہیں گی۔

دوسری جانب سوڈان نے امریکی اقدام کو اہم اور مثبت پیش رفت قرار دیا ہے۔ خرطوم کا کہنا ہے کہ امریکا کی جانب سے پابندیوں کے خاتمے سے دونوں ملکوں کو ایک دوسرے کے قریب آنے کا موقع ملے گا۔

رواں سال جنوری میں سوڈان کے صدر عمر حسن البشیر نے خادم الحرمین الشریفین شاہ سلمان بن عبدالعزیز آل سعود کا سوڈان پر عاید پابندیاں اٹھانے کے لیے مساعی کا شکریہ ادا کیا تھا۔ خادم الحرمین الشریفین نے سوڈانی صدر ٹیلیفون پر خرطوم پر عاید کی گئی امریکی پابندیوں کے خاتمے پر مبارک باد پیش کی تھی۔

ادھر سوڈان کی وزارت خارجہ کی جانب سے جمعہ کے روز جاری کیے گئے ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ سوڈان کی قیادت، حکومت اور عوام سب امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے اس فیصلے کا خیر مقدم کرے ہیں جس میں سوڈان پر عاید کردہ پابندیاں حتمی طور پر ختم کرنے کا اعلان کیا گیا ہے۔

امریکی وزارت خارجہ کی ترجمان ھیذر نویرٹ نے ایک بیان میں کہا تھا کہ گذشتہ نو ماہ کے دوران سوڈان حکومت کے اقدامات سے ظاہر ہوتا ہے کہ خرطوم امریکا کے ساتھ تعاون کے لیے سنجیدگی کا مظاہرہ کررہا ہے۔

خیال رہے کہ سابق امریکی صدر براک اوباما نے جنوری 2017ء کو سوڈان پر عاید کی گئی پابندیاں جزوی طور پر ختم کرنے کا اعلان کیا تھا۔ یہ پابندیاں چھ ماہ کے لیے عارضی طور پر ختم کی گئی تھیں۔

انسانی حقوق کی تنظیموں نے باراک اوباما کے سوڈان بارے فیصلے کی مخالفت کی تھی۔ اب ڈونلڈ ٹرمپ نے حتمی طور پر ان پابندیوں کو ختم کرنے کا اعلان کیا ہے جس کے نتیجے میں سوڈان کو کئی سال کی عالمی تنہائی سے نکلنے کا موقع ملے گا۔

صدر ٹرمپ کی منظوری کے بعد سابق صدر بل کلنٹن کے دور میں 16 اکتوبر 1997ء کو جاری کردہ ایگزیکٹو آرڈر نمبر 13067 اور 17 اکتوبر 2006ء کو جارج بش کےدور میں جاری کردہ ایگزیکٹو آرڈر نمبر 13412 جن میں سوڈان پر اقتصادی پابندیاں عاید کی گئی تھیں کو منسوخ کردیا جائے گا۔ ٹرمپ کے فیصلے کے بعد سوڈان کا شمار دہشت گردی کی پشت پناہی کرنے والے ممالک کی فہرست سے خارج کردیا جائے گا۔

پابندیوں کے خاتمے کے بعد امریکا میں سوڈان کے منجد اثاثے بحال، بنکوں کا لین دین پھر سے شروع ہوگا اور دونوں ملکوں میں تجارتی معاہدوں کی راہ ہموار ہوگی۔