.

حسن البناء کے پوتے کے ہاتھوں جنسی تشدد کا شکار خاتون بول پڑیں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

عرب دنیا کی سب سے بڑی اسلام پسند تحریک ’اخوان المسلمون‘ کے پوتے اور سرکردہ مذہبی رہ نما طارق رمضان پر ایک خاتون کی عصمت ریزی کے الزام سے متعلق خبروں میں اہم پیش رفت سامنے آئی ہے۔

متاثرہ خاتون نے اپنے ایک انٹرویو میں پہلی بار میڈیا سے بات کرتے ہوئے اپنے ساتھ پیش آئے واقعے کی تفصیلات بیان کی ہیں۔ طارق رمضان کے ہاتھوں جنسی تشدد کا شکار خاتون نے ملزم کے خلاف فرانس کی ایک عدالت میں مقدمہ قائم کر رکھا ہے۔

فرانس کے ایک مقامی ٹی وی BFMWTV ‘ کو انٹرویو کے دوران ھند العیاری نے بتایا کہ وہ طارق رمضان کی شخصیت سے بہت متاثر تھیں اور وہ انہیں ایک بے مثال انسان سمجھتی تھیں۔ اسی سوچ نے طارق رمضان کا انٹرویو لینے پر اکسایا۔

العیاری نے بتایا کہ وہ طارق رمضان کا انٹرویو کرنے پیرس پہنچیں۔ اپنا تمام سامان ایک سہیلی کے گھر رکھا۔ اس دوران طارق رمضان کا فون آیا جس میں انہوں نے کہا کہ وہ مجھ سے ہوٹل کے کمرے میں ملنا چاہتے ہیں۔

العیاری کہتی ہیں کہ میں نے بھی ہوٹل ہی میں ملاقات کی حامی بھرلی کہ یہاں شور شرابا نہیں ہوگا۔ کچھ دیر بعد طارق رمضان مشرقی مٹھائیوں کی ایک رقابی تھامے کمرے میں داخل ہوئے اور مجھے ان میں سے کھانے کو کہا۔ میں نے معذرت کرلی۔

انہوں نے بتایا کہ غسل خانے میں ہاتھ دھونے کے بعد جیسے کمرے میں واپس آئے تو انہوں نے مجھے زور سے بوسہ دیا۔ اس کے بعد پوری قوت سے پکڑ کر نیچے پھینکا۔ میں حواس باختہ ہوگئی تھی اور مجھے سانس لینے تک کا موقع نہیں مل رہا تھا۔

میں نے انہیں جنسی تشدد سے باز رہنے کا مطالبہ کیا مگر انہوں نے مجھے طمانچہ مارا۔ مجھے ایسے لگا کہ اگر میں نے مزاحمت کی تو وہ مجھے قتل کردے گا۔ اس طرح اس نے میری عزت برباد کی۔