.

نیویارک میں ٹرک ڈرائیور نے راہ گیروں کو کچل دیا، 8 ہلاک

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

امریکی شہر نیویارک کے علاقے مین ہیٹن میں ایک شخص نے راہگیروں پر گاڑی چڑھا دی جس سے کم از کم آٹھ افراد ہلاک اور 12 زخمی ہوئے ہیں۔

گاڑی سے ایک 26 سالہ شخص نقلی بندوق لہراتا ہوا باہر نکلا، جسے پولیس نے فائر کر کے زخمی کیا اور پھر گرفتار کر لیا۔ امریکی میڈیا نے اس شخص کا نام سیفلو سائپوف بتایا ہے جو 2010 میں امریکہ آیا تھا۔ وہ ریاست فلوریڈا کا رہائشی تھا۔

نیویارک کے میئر بل ڈی بلازیو نے کہا ہے کہ ’یہ دہشت گردی کا بزدلانہ واقعہ تھا جس میں بےگناہ شہروں کو نشانہ بنایا گیا۔‘ انھوں نے کہا: ’ہم جانتے ہیں کہ اس فعل کا مقصد ہماری ہمت توڑنا ہے۔ لیکن ہم یہ بھی جانتے ہیں کہ نیویارک کے باسی مضبوط اور پرعزم ہیں، اور ہماری ہمت کو کبھی بھی تشدد سے اور ڈرانے سے توڑا نہیں جا سکتا۔

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کو اس واقعے کے بارے میں آگاہ کر دیا گیا ہے، جنھوں نے ٹویٹ کرتے ہوئے کہا: ’نیویارک میں حملہ ایک اور بیمار اور پاگل شخص کا کام لگتا ہے۔ قانون نافذ کرنے والے ادارے پیروی کر رہے ہیں۔ امریکہ میں نہیں!‘

اس کے بعد انھوں نے ایک اور ٹویٹ کی جس میں کہا کہ ’مشرقِ وسطیٰ میں دولتِ اسلامیہ کو شکست دینے کے بعد ہم اسے امریکہ میں داخل نہیں ہونے دیں گے۔ بہت ہو چکی!‘