.

جنسی اسکینڈل کے بعد برطانوی وزیر دفاع عہدے سے مستعفی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ایک خاتون کو جنسی طور پرہراساں کرنے کے الزام کے بعد برطانوی وزیر دفاع مائیکل فالن نے عہدے سے استعفیٰ دے دیا ہے۔ وہ پہلے برطانوی سیاست دان ہیں جنہوں نے جنسی اسکینڈل کے بعد اہم ترین وزات کا قلم دان چھوڑ دیا۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق مستعفی وزیر دفاع مائیکل فالن نے وزیراعظم تھریسا مے کو ایک مکتوب ارسال کیا ہے جس میں انہوں نے پارلیمنٹ میں اپنے اسکینڈل کے حوالے سے ہونے والی بات چیت کا تذکرہ کیا ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ میرے بارے میں بہت سی غلط باتیں پھیلائی گئی ہیں میں ساتھ ہی یہ تسلیم کرتا ہوں کہ ماضی میں میرا کردار مسلح افواج کے تقاضوں کے حوالے سے مثالی نہیں تھا۔

مسٹر فالن کا کہنا ہے کہ ایک رکن پارلیمنٹ کی حیثیت سے میں اپنے کیس کو فالو کروں گا مگر میں وزارت دفاع کے عہدے سے استعفیٰ پیش کررہا ہوں۔

خیال رہے کہ مائیکل فالن پر الزام ہےکہ اس نے سنہ 2002ء میں ایک صحافیہ کی گردن پر ہاتھ رکھا تھا جسے جنسی ہراسگی کے معنوں میں لیا گیا تاہم اس واقعے کی تحقیقات نہیں کہ گئیں۔

دوسری جانب وزیراعظم تھریسا مے نے ان کا استعفیٰ قبول کرنے کے ساتھ ان کی طویل اور حیرت انگیز خدمات پر شکریہ ادا کیا ہے۔

جوابی مکتوب میں وزیراعظم مے نے لکھا ہے کہ ’اپنے موقف کے حوالے سے جس ٹھوس پن اور بہترین مثال قائم کرنے کا مظاہرہ کیا ہے وہ برطانوی فوج کے مردو خواتین اہلکاروں کے لیے بہترین مثال ہے۔"