.

ایران، حوثی شدت پسندوں کو بیلسٹک میزائل مہیا کررہا ہے: عرب اتحاد

تہران اور حزب اللہ حوثیوں کو اسلحہ اور تکنیکی معاونت فراہم کرتے ہیں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یمن میں دستوری حکومت کا تختہ الٹنے والے باغیوں کو کچلنے اور آئینی حکومت کی رٹ بحال کرنے کے لیے سعودی عرب کی قیادت میں قائم عرب اتحاد نے الزام عاید کیا ہے کہ ایران یمن کےحوثی باغیوں کو بیلسٹک میزائل فراہم کررہا ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق گذشتہ روز الریاض میں ایک پریس کانفرنس سے خطاب میں عرب اتحاد کے ترجمان کرنل ترکی المالکی نے کہا کہ یمن کے حوثی باغیوں کی سعودی عرب کے خلاف خطرناک جارحیت اور بیلسٹک میزائل حملوں کے پیچھے ایران کا ہاتھ ہے۔ حوثی شدت پسند ایران کی معاونت سے سعودی عرب پر حملے کررہے ہیں۔

پریس کانفرنس کے دوران کرنل ترکی المالکی نے ایران کی طرف سے یمنی باغیوں کو اسلحہ اور میزائلوں کی فراہمی کی تصاویری ثبوت بھی دکھائے۔ ان کا کہنا تھا کہ ایران کے علاوہ لبنانی دہشت گرد ملیشیا حزب اللہ بھی حوثیوں کو اسلحہ، جنگی تربیت اور تکنیکی معاونت فراہم کرتی ہے۔

ترکی المالکی نے کہا کہ ایران کی طرف سے یمن میں حوثی باغیوں کو زمین سے زمین پر مار کرنے والے بیلسٹک میزائل فراہم کئے ہیں۔ یہ سلسلہ جاری ہے۔ جن گاڑیوں سے بیلسٹک میزائل داغے جاتے ہیں وہ بھی ایران سے لائی گئی ہیں۔ نیز ایران یمنی باغیوں کو بغیر پائلٹ ڈرون طیارے بھی فراہم کررہا ہے۔

انہوں نے دو روز قبل سعودی عرب کے شہر الریاض پر بیلسٹک میزائل حملے کی سازش کی شدید مذمت کی اور کہا کہ اس حملے کے پیچھے ایران کا ہاتھ ہے۔ یمنی باغیوں میں اتنی جرات نہیں کہ وہ سعودی عرب پر اس طرح کے حملوں کی منصوبہ بندی کرسکیں۔

ایرانی جنگی ماہرین حوثیوں کو بیلسٹک میزائلوں کے استعمال کی تربیت دیتے ہیں۔ خیال رہے کہ دو روز قبل یمن میں حوثی باغیوں کی طرف سے سعودی عرب پر داغا گیا ایک بیلسٹک میزائل خود کار دفاعی نظام کے ذریعے ہدف تک پہنچنے سے قبل ہی تباہ کردیا گیا تھا۔

عرب اتحادی فوج کے ترجمان کا کہنا تھا کہ ایران کی معاونت سے یمن کے حوثی باب المندب گذرگاہ اور دیگر آبی گذرگاہوں پر بارود سے بھری کشتیوں کے ذریعے بحری جہازوں کے لیے بھی حملے کرسکتے ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ یمنی باغیوں تک اسلحہ الحدیدہ گذرگاہ کے راستے پہنچایا جاتا ہے۔ بیلسٹک میزائل کھول کر چھوٹے چھوٹے حصوں میں لائے جاتے ہیں جنہیں یمن میں دوبارہ جوڑا جاتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ حوثی باغیوں نے سعودی عرب کی سرحد کے ساتھ 50 ہزار بارودی سرنگیں بچھا رکھی ہیں۔