.

بحرین : پولیس اہلکاروں کی بس پر حملے میں ملوّث دہشت گرد گرفتار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

بحرین میں حکام نے گذشتہ ماہ پولیس کی ایک بس پر حملے میں ملوث ایک دہشت گرد کو گرفتار کر لیا ہے۔

بحرینی حکام کے مطابق دہشت گردی کے اس واقعے میں ملوّث حملہ آوروں کا ایرانی پاسداران انقلاب سے وابستہ سیل سے تعلق تھا اور اس وقت مطلوب متعدد دہشت گرد ایران میں مقیم ہیں۔

بحرین کی وزارت داخلہ نے بدھ کو ایک بیان میں کہا ہے کہ سکیورٹی فورسز کی مادر وطن کے تحفظ کے لیے کوششوں کے تحت ایک خطرناک دہشت گرد کو گرفتار کر لیا گیا ہے جبکہ اس کا ایک ساتھی ایران فرار ہوگیا ہے۔انھوں نے 27 اکتوبر کو پولیس اہلکاروں کی ایک بس پر بم حملہ کیا تھا۔

بحرینی حکام کا کہنا ہے کہ ملک میں دہشت گردی کی کارروائیوں کی منصوبہ بندی میں نو دہشت گرد ملوث تھے۔ان کا سپاہ پاسداران انقلاب ایران سے قریبی تعلق تھا۔ اس سیل کے پکڑے جانے سے بحرین میں سیاسی شخصیات کو دہشت گردی کے حملوں میں نشانہ بنانے کی سازش کا بھی پتا چلا ہے۔

دہشت گردی کے اس سیل کے ارکان کو سپاہ پاسداران انقلاب کے ایک کیمپ میں دھماکا خیز مواد اور آتشیں اسلحہ چلانے کی تربیت دی گئی تھی اور ایرانیوں نے انھیں مواد اور لاجسٹیکل مواد مہیا کیا تھا۔

بحرینی حکام کے مطابق اس سیل کے ارکان زمینی راستے سے اکتوبر 2011ء میں شام میں گئے تھے اور وہاں سے ایران گئے تھے لیکن شامی اور ایرانی بندرگاہوں پر ان کے پاسپورٹس پر مہریں بھی نہیں لگائی گئی تھیں۔پھر انھوں نے جولائی 2017ءمیں دوبارہ ایران کا سفر کیا تھا۔