.

قطر کے آلِ ثانی کی اقتدار کے لیے کھینچاتانی سے بھر پور تاریخ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

العربیہ ٹیلی ویژن چینل نے ایک دستاویزی پروگرام میں قطر کے حکمراں خاندان ’’ آل ثانی‘‘ کی شخصیات کی اقتدار کے لیے ایک دوسرے سے کھینچا تانی اور باہمی کشمکش کو اجاگر کیا ہے۔

یہ ڈاکومینٹری بتاتی ہے کہ قطر کے سابق امیر شیخ حمد بن خلیفہ نے کیسے اپنے شیخ خلیفہ بن حمد کے خلاف 1995ء میں بغاوت کی تھی اور ان کو معزول کرکے اقتدار پر قبضہ کر لیا تھا لیکن ان کے اس اقدام پر کسی کو حیرت نہیں ہوئی تھی کیونکہ ان کے پیش رو نے بھی اپنے پیش رو امیر سے اسی طرح اقتدار چھینا تھا ۔

شیخ حمد بن خلیفہ نے برسر اقتدار آنے کے بعد اپنی اس حکمت عملی کو صرف قطر تک محدود نہیں رکھا تھا بلکہ انھوں نے خلیجی ممالک اور عرب دنیا تک پاؤں پسارنے کی کوشش کی اور ان ممالک میں بھی حکومت کی تبدیلی کے لیے اپنے ننھے سے ملک کے قد سے بڑھ کر کردار ادا کرنے کی کوشش کی تھی۔

انھوں نے اپنے خواب کو شرمندہ تعبیر کرنے کے لیے نئے مگر باہم مخالف اتحاد قائم کیے تھے۔انھوں نے انتہا پسندوں اور دہشت گردوں کی حمایت کی اور اپنے ہمسایہ ممالک میں گڑ بڑ کرانے کا کوئی موقع ہاتھ سے جانے نہیں دیا۔

واضح رہے کہ شیخ خلیفہ بن حمد آل ثانی 22 فروری 1972ء سے 27 جون 1995ء تک قطر کے امیر رہے تھے۔انھیں ان کے بیٹے حمد بن خلیفہ آل ثانی نے معزول کرکے خود اقتدار سنبھال لیا تھا لیکن حمد بن خلیفہ نے اپنی امارت کے خلاف یہ نوبت آنے سے قبل ہی اقتدار اپنے بیٹے شیخ تمیم کے سپرد کر دیا تھا۔