.

ماکروں کی سال گرہ پر فرانسیسی چراغ پا کیوں ؟

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

فرانسیسی صدر امانوئل ماکروں رواں ہفتے کے اختتام پر اپنی چالیس ویں سال گرہ منانے کی تیاری کر رہے ہیں۔

فرانسیسی اخبار "لا نوویل ریبو بلیک" کے مطابق آئندہ جمعرات کے روز عمر کے چالیس برس مکمل کرنے والے ماکروں ہفتے کی شام اس حوالے سے Chambord پیلس کے ایک ہال میں سال گرہ کی تقریب کا انعقاد کریں گے۔ یہ وہ ہی محل ہے جہاں فرانسوا اوّل بادشاہ نے اپنی زندگی گزاری تھی۔ اس حساس علامتی اقدام نے ریاست کے صدر پر تنقید کا دروازہ کھول دیا ہے جن کو "دولت مندوں کا سربراہ" قرار دیا جاتا ہے۔

لیوار کے علاقے میں واقع مذکورہ محل کو تعمیراتی انجینئرنگ کا ایک شاہ کار شمار کیا جاتا ہے۔

فرانسیسی صدر کے دفتر کی جانب سے صرف اس بیان پر اکتفا کیا گیا ہے کہ "صدر ماکروں اور اور ان کی اہلیہ بریگیٹ ہفتے کے اختتام پر اپنی چُھٹی خاص طور پر Chambord پیلس سے ملحقہ علاقے میں اپنے ذاتی خرچ پر گزاریں گے"۔

متعدد میڈیا رپورٹوں کے مطابق ماکروں "ميزون ڈی ریوراکٹر" فوریسٹ میں واقع ایک پرانے گھر میں مقیم ہیں جو Chambord پیلس سے چند میٹر کے فاصلے پر واقع ہے۔ یہ رہائش گاہ فور اسٹار نوعیت کی شما کی جاتی ہے جس کا ہفتے کی اختتامی چھٹّی پر کرایہ 800 سے ہزار یورو تک ہو سکتا ہے۔

شیمبور پیلس اقوام متحدہ کی ذیلی تنظیم یونیسکو کی عالمی ورثے کی فہرست میں شامل ہے۔ ہر سال تقریبا دس لاکھ افراد اس کا دورہ کرتے ہیں۔ یہ محل تقریبا پانچ صدی قبل فرنسوا اوّل بادشاہ (1547-1494) کے حکم پر تعمیر کیا گیا تھا۔

اکتوبر 2016 میں صدر منتخب ہونے سے قبل "چیلنجز" نامی جریدے سے گفتگو کرتے ہوئے ماکروں نے کہا تھا کہ وہ ریاست کے صدر کو ایک خاص پوزیشن دینا چاہتے ہیں جو رومن شہنشاہیت میں جوپیٹر کے بڑے دیوتا سے مشابہت رکھتا ہو۔

فرانسیسی اخبار لوفیگارو کے مطابق بائیں بازو کے سخت گیر رہ نما جان لوک میلونشن نے اپنے تبصرے میں استفسار کیا ہے کہ "صدر اپنی سال گرہ شیمبور میں کیوں منا رہے ہیں.. میں اس اقدام کو واہیات شمار کرتا ہوں؟"

دوسری جانب دائیں بازو کے شدت پسند رہ نما نکولا ڈوبون اینن کا کہنا ہے کہ ایسے میں جب کہ فرانسیسی عوام کو ٹیکسوں کے بوجھ اور امن و امان کے عدم وجود کا سامنا ہے صدر ماکروں اپنی 40 ویں سال گرہ شیمبور میں منا رہے ہیں۔