.

برطانوی سفارتکار بیروت میں عصمت ریزی کے بعد قتل

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

لبنان میں حکام نے بتایا ہے کہ ایک برطانی خاتون سفارت کار کو دارالحکومت بیروت کے قریب نامعلوم افراد نے عصمت ریزی کے بعد قتل کردیا تھا۔ مقتولہ’ریبکا ڈیکس‘ کی لاش ہفتے کی شام بیروت سے محض آٹھ کلو میٹر دور جبل لبنان گورنری کے جل الدیب کے علاقے سے ایک سڑک کے کنارے پر پائی گئی تھی۔

پولیس اور دیگر تفتیشی حکام کا کہنا ہے کہ لاش کا پوسٹ مارٹم کرنے سے پتا چلا ہے کہ خاتون سفارت کار کو اونچی رسی کے ساتھ گلا گھونٹ کر ہلاک کیا گیا۔



العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق مقامی اخبارات میں بھی برطانوی سفارت کارہ کے قتل کی خبر شائع ہوئی۔ ان خبروں میں بتایا گیا ہے کہ مقتولہ کی لاش رومیہ جیل کے قریب ضھر الباشق اسپتال منتقل کی گئی۔ اس کی شناخت جائے وقوعہ سے ملنے والی اس کی شناختی دستاویزات سے ہوا۔ واقعے کے فوری بعد برطانوی سفارت خانے سے رابطہ کیا گیا۔



بیروت میں متعین برطانوی سفیر ہیوگر شورٹر نے ایک بیان میں کہا کہ پورا سفارت خانہ ریبکا کے بہیمانہ قتل پر دکھ اور صدمے سے دوچار ہے۔ اس المناک واقعے پر ہم بیکی کے اہل خانہ، اس کےدوستوں اور ساتھیوں کے دکھ میں برابر کے شریک ہیں۔

بیان میں مزید کہا گیا کہ سفارت خانہ مقتولہ کے قتل کے واقع کی تحقیقات کے لیے ہر ممکن کوشش کرے گا اور قاتلوں کو قانون کے کٹہرے میں لانے تک کوششیں جاری رکھی جائیں گی۔

لبنان کے مقامی اخبار ’النھار‘ کے مطابق سفارت کارہ کے قتل کے سیاسی محرکات نہیں لگتے جب کہ بی بی سی ریڈیو کے مطابق پولیس کے ایک باخبر ذریعے نے بتایا ہے کہ ڈائیکس کو ریپ کے بعد گلہ گھونٹ کر قتل کیا گیا۔ ذرائع کا یہ بھی کہنا ہے کہ غالب امکان یہ ہے کہ اسے جمعہ کے روز اغواء کے بعد عصمت ریزی کا نشانہ بنایا گیا۔ بعد ازاں جان سے مار دیا گیا۔

برطانیہ میں موجود مقتولہ ریپیکاکے اہل خانہ کی طرف سے جاری ہونے والے بیان میں بھی واقعے پر گہرے دکھ اور صدمے کا اظہار کیا گیا ہے۔ برطانوی میڈیا کے مطابق مقتولہ خاتون سنہ 2010ء سے برطانوی وزارت خارجہ کی ملازم تھیں۔ مانچسٹر یونیورسٹی اور لندن کی بریکبیک یونیورسٹی سے اس نے عالمی امن میں ایم اے کی ڈگری لے رکھی تھی۔