.

آرامکو کے حصص کی فروخت ، بنک کاروں کو سعود ی عرب آنے کی دعوت

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کی سرکاری تیل کمپنی آرامکو نے پہلی مرتبہ اپنے پانچ فی صد حصص کی اسٹاک مارکیٹ کے ذریعے فروخت کے لیے بعض عالمی بنکوں کے اعلیٰ انتظامی نمائندوں کو مملکت میں آنے کی دعوت دی ہے ۔ان سے حصص کی فروخت کے لیے مشاورت کی جائے گی۔

ذرائع کے مطابق سٹی بنک،ڈیوشے اور گولڈ مین سچز سمیت مختلف عالمی بنکوں کو آیندہ ہفتوں کے دوران میں حصص کی فروخت پر مشاورت کی غرض سے سعودی عرب آنے کی دعوت دی گئی ہے۔اس سے یہ ظاہر ہوتا ہے کہ 2018ء میں آرامکو کے پہلی مرتبہ پانچ فی صد حصص کی فروخت کے لیے تیاریاں جاری ہیں۔

دو بنک کاروں اور تین ذرائع نے بتایا ہے کہ سٹی ، ڈیوشے اور گولڈ مین سچز کے اعلیٰ انتظامی افسر اور کیپٹل مارکیٹ کی ٹیموں کے ارکان سعودی عرب میں آرامکو کے حکام کے ساتھ اجلاسوں میں شریک ہوں گے۔یہ تینوں بنک آرامکو کے پانچ فی صد حصص کی فروخت کے عمل میں عالمی رابطہ کار کے طور پر انتخاب کے لیے بولی میں حصہ لیں گے۔

انھوں نے مزید بتایا ہے کہ یہ بات چیت سعودی عرب کے مشرقی صوبے کے شہر الظہران میں ہوگی جہاں آرامکو کے صدر دفاتر واقع ہیں۔تاہم سعودی آرامکو ، ڈیوشے بنک ، سٹی بنک اور گولڈمین سچز نے اس معاملے پر کوئی تبصرہ کرنے سے انکار کیا ہے۔

واضح رہے کہ سعودی عرب کی قومی کمپنیوں کے اسٹاک مارکیٹ کے ذریعے حصص کی فروخت کو ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان کے اعلان کردہ معاشی اصلاحات کے ویژن 2030ء میں مرکزی حیثیت حاصل ہے ۔اس کا مقصد تیل کی معیشت پر انحصار کم کرنا اور آمدن کے دوسرے ذرائع پیدا کرنا ہے۔

سعودی حکومت کا کہنا ہے کہ آرامکو کے تمام اثاثوں کی مالیت دو ٹریلین ڈالرز کے لگ بھگ ہے۔سعودی ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان نے گذشتہ ماہ برطانوی خبررساں ایجنسی رائیٹرز سے ایک انٹرویو میں کہا تھا کہ آرامکو کے حصص کی فروخت کے لیے تمام انتظامات بہ خیر وخوبی انجام پا رہے ہیں۔انھوں نے بھی آرامکو کی کل مالیاتی قدر کا تخمیہل دو کھرب ڈالرز بتایا تھا اور کہا تھا کہ یہ رقم اس سے زیادہ بھی ہوسکتی ہے۔

سعودی عرب اپنی اسٹاک ایکس چینج کے ذریعے آرامکو کے حصص عوام کو پیش کرنے کے تمام انتظامات کو حتمی شکل دے رہا ہے لیکن وہ اس کے علاوہ کسی بین الاقوامی اسٹاک مارکیٹ کے ذریعے بھی یہ حصص فروخت کرنا چاہتا ہے۔آرامکو کے فروخت کے لیے پیش کیے جانے والے ان حصص کی کل مالیت ایک سو ارب ڈالرز تک ہوسکتی ہے۔