.

حمزہ بن لادن نے ایران میں اپنی شادی کی تقریب اس طرح منائی تھی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

امریکی مرکزی انٹیلیجنس ایجنسی CIA کی جانب سے جاری ایبٹ آباد دستاویزات میں شامل ایک وڈیو میں القاعدہ کے بانی اسامہ بن لادن کے بیٹے حمزہ بن لادن کی شادی کی تقریب سے متعلق نئے انکشافات سامنے آئے ہیں۔

ابو اسامہ کی کنیت سے معروف حمزہ بن لادن کی شادی 2005 میں 17 سال کی عمر میں ایران میں قیام کے دوران القاعدہ کے دوسرے اہم ترین رہ نما عبداللہ احمد عبداللہ عرف ابو محمد المصری کی بیٹی سے ہوئی تھی۔ المصری القاعدہ کے موجودہ سربراہ ایمن الظواہری کا نائب ہے۔

ریکارڈ شدہ اس وڈیو میں القاعدہ تنظیم کے رہ نماؤں اور دہشت گردی کی بین الاقوامی فہرستوں میں شامل شخصیات کا مجموعہ نظر آ رہا ہے۔ ان میں سابق مصری صدر انور سادات کے قاتل کا بھائی محمد شوقی الاسلامبولی، اسامہ بن لادن کا داماد اور القاعدہ کا سابق ترجمان سلیمان ابو الغیث اور سیف العدل شامل ہیں۔ غالب گمان ہے کہ تقریب کی وڈیو بنانے کی ذمے داری سیف کے پاس تھی۔

حمزہ بن لادن کے ساتھ اس کے بعض دیگر بھائی بھی نظر آ رہے ہیں۔ ان میں سعد بن لادن، حسن بن لادن اور محمد بن لادن شامل ہیں۔ تقریب میں گفتگو کرتے ہوئے سعد بن لادن نے کہا کہ "حمزہ میرا نواں بھائی جس کی شادی میں کر رہا ہوں"۔ یاد رہے کہ سعد بن لادن ایران سے نکلنے کے بعد وزیرستان میں ایک امریکی ڈرون حملے میں جاں بحق ہو گیا تھا۔

وڈیو کلپ سے ظاہر ہوتا ہے کہ حمزہ بن لادن کی شادی کی تقریب دو مختلف مقامات پر ہوئی۔ ان میں پہلا مقام ایک مسجد تھی اور دوسرا مقام ایرانی پاسداران انقلاب کی جانب سے القاعدہ کے رہ نماؤں کی رہائش کے لیے مقرر کمپاؤنڈ تھا۔