.

فلپائن : آتش فشاں پھٹنے کے بعد لاوا نکلنے کا سلسلہ جاری ، ہزاروں افراد بے گھر

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

فلپائن میں ایک آتش فشاں پہاڑ پھٹ پڑا ہے اور اس سے لاوا نکلنے کے نتیجے میں ستر ہزار سے زیادہ افراد بے گھر ہوگئے ہیں۔

فلپائنی حکام کے مطابق دو ہفتے قبل صوبہ البے میں واقع مایون پہاڑ میں آتش فشاں پھٹنے کے آثار نمودار ہوئے تھے اور اب اس سے گذشتہ تین روز سے سرخ رنگت کا گرم لاوا نکل رہا ہے۔ یہ علاقہ دارالحکومت منیلا سے قریباً 340 کلومیٹر جنوب مشرق میں واقع ہے۔

فلپائنی ماہرین نے سوموار کو خبردار کیا تھا کہ آتش فشاں پھٹنے سے علاقے میں تباہی آ سکتی ہے۔اس کے بعد نوگو زون میں توسیع کردی گئی تھی اور اس کو 6 مربع کلومیٹر سے بڑھا کر 9 کلومیٹر تک کردیا گیا تھا ۔

آتش فشاں کے پھٹنے سے راکھ اڑ کر لوگوں کے گھروں میں گررہی تھی جس کے بعداس ممنوعہ علاقے کے نزدیک واقع بستیوں سے بھی لوگ اپنا گھر بار چھوڑ کر محفوظ مقامات کی جانب جارہے ہیں یا چلے گئے ہیں اور انھیں اسکولوں اور دوسری عمارتوں میں عارضی طور پر ٹھہرایا جارہا ہے مگر انھیں بستر یا کمبل دستیاب نہیں ہیں اور ان میں سے بیشتر زمین پر سونے پر مجبور ہیں۔

مایون کے مغرب میں واقع زیریں قصبے گینوبٹن میں آتش فشاں کی راکھ کی ایک تہ جم چکی ہے اور اس کی فوٹیج ایک مقامی ٹی وی چینل نے نشر کی ہے۔آتش فشاں پھٹنے کے عمل کو دیکھنے کے لیے امریکیوں سمیت غیر ملکی سیاحوں کی بڑی تعداد بھی مایون کا رُخ کررہی ہے۔

حکام نے اس علاقے میں واقع تمام ہوائی اڈے بند کردیے ہیں جبکہ شاہراہوں پر راکھ کی بارش سے ڈرائیونگ ناممکن ہوچکی ہے۔مقامی حکومتوں نے علاقے کے مکینوں کو چہروں پر ماسک اور حفاظتی عینکیں پہننے کی ہدایت کی ہے۔

یادرہے کہ مایون سے گذشتہ چار صدیوں کے دوران میں 51 مرتبہ لاوا پھٹا ہے ۔اس کو فلپائن کے 22 متحرک آتش فشاں پہاڑوں میں سب سے خطرناک قرار دیا جاتا ہے۔