.

محبت میں دھوکا کھانے والی بھارتی لڑکی نے زہر کھاتے ہوئے اپنی وڈیو بنا لی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

بھارت میں گزشتہ دو روز کے دوران اُس لڑکی سے متعلق خبروں کا چرچا ہے جس نے زہر کھا کر اپنی خود کشی کے لمحات وڈیو کلپ میں محفوظ کر لیے۔

بھارتی ریاست مہاراشٹر کے قصبے روہینی میں نیشا دیوی داس نامی لڑکی نکھیل بورکر نامی ایک نوجوان کے ہاتھوں بھینٹ چڑھ گئی۔ بورکر نہ صرف شادی سے متعلق اپنے وعدوں سے مُکر گیا بلکہ اس نے نیشا کے کنوارپن کو ختم کر کے اسے بلیک میل کرنا بھی شروع کر دیا تھا۔ اس کے نتیجے میں نیشا نے 4 فروری کو مقررہ اپنی شادی سے دس روز قبل گزشتہ بدھ کے روز دوپہر کے وقت اپنے موبائل کیمرے کے سامنے بیٹھ کر زہر کھا لیا۔

زہر کے کارگر ہونے سے پہلے نیشا نے بنائی گئی وڈیو اپنے سابق محبوب کے موبائل پر بھیج دی تا کہ اسے معلوم ہو سکے کہ نیشا اپنی زندگی کا چراغ اس سنگ دل انسان کی وجہ سے گُل کر رہی ہے۔ نیشا کو فوری طور پر ہسپتال پہنچایا گیا تاہم وہ جانبر نہ ہو سکی۔ اس کی موت کی خبر مقامی میڈیا میں جنگل کی آگ کی طرح پھیل گئی۔ بعد ازاں عالمی میڈیا میں بھی واقعے کی بازگشت پہنچ گئی۔

ایک دوسری وڈیو میں نیشا کے اکلوتے بھائی کو اپنے باپ کے ساتھ بات چیت کرتے ہوئے دکھایا گیا ہے۔ وڈیو مین نیشا کا بھائی یہ مطالبہ کر رہا ہے کہ اس کی بہن کی موت کے ذمّے دار شخص کو گرفتار کیا جائے۔ پولیس کا کہنا ہے کہ وہ وہ نیشا کی وڈیو کا باریک بینی سے جائزہ لے رہی ہے اور واقعے کی تفصیلات کے حوالے سے تحقیقات کر رہی ہے۔

پیرو کے ایک اخبارTrome کی ویب سائٹ پر خبر سے متعلق ایک نیا انکشاف کیا گیا ہے کہ خود کشی کرنے والی نیشا کو اس کے گھر والوں نے ہسپتال نہیں پہنچایا بلکہ یہ کام ایک دوسرے شخص نے کیا جس کو نیشا "اتفاقی طور پر مل گئی تھی"۔ البتہ بھارتی اور انگریزی میڈیا میں اس بات کا کہیں ذکر نہیں ملتا ہے۔ یہاں ایک سوال یہ بھی سامنے آتا ہے کہ جب نیشا نے اپنے گھر میں خود کشی کی تو پھر وہ "اتفاقی طور پر" گھر سے باہر کیسے مل سکتی ہے؟