.

مراکش: نابینا بچیوں کی عزت سے کھیلنے والے درندے کو 8 سال قید

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

قصور شہر میں بچیوں کے ساتھ درندگی کا مظاہرہ کرنے کے بعد انہیں قتل کرنے کے لرزہ خیز واقعے کے مشابہ ایک کیس افریقی ملک مراکش میں بھی سامنے آیا ہے جہاں استاد کی شکل میں ایک بھیڑیے نے چار کم سن اور نابینا بچیوں کی عصمت دری کے سنگین جرم کا ارتکاب کیا ہے۔ عدالت نے ملزم کو کم سن نابینا طالبات کو اپنی جنسی ہوس کا نشانہ بنانے کے الزام میں 8 سال قید کی سزا سنائی ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق مراکش میں نابینا بچیوں کو درندگی کی بھینٹ چڑھانے کے واقعے کے پورے معاشرے کو جھنجھوڑ کر رکھ دیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق یہ واقعہ گذشتہ سال جون اور رمضان المبارک کے دوران سامنے آیا جب شمالی شہر تازہ میں نابینا بچیوں کو اسکول کی تعلیم دلوانے والی ایک تنظیم نے بتایا کہ بچیوں کو برائیل پر تعلیم دلانے کے لیے مقرر 50 سالہ مدرس نے بچیوں کا ریب کیا ہے۔ یہ نام نہاد استاد بچیوں کو الگ کمرے میں لے جاتا اور کمرہ بند کرنے کے بعد اپنا گھناؤنا کھیل کھلتا۔

اس درندگی کا انکشاف اس وقت ہوا جب ایک سات سالہ بچی نے اپنے گھر سے واپس اسکول آنے سے انکار کردیا۔ جب بچی سے اسکول نہ جانے کی وجہ پوچھی گئی تو اس نے سب بتا دیا کہ درندہ نما استاد کس طرح معصوم اور نابینا بچیوں کی عزتوں سے کھیلتا ہے۔ اس کے بعد دیگر بچیوں نے بھی ملزم کے خلاف گواہی دی۔

ملزم کے خلاف شکایات بعد اسے فوری طور پر حراست میں لے لیا گیا۔ ملزم کے خلاف سات ماہ تک تحقیقات جاری رہیں جس کے بعد عدالت نے جرم ثابت ہونے پر اسے 8 سال قید اور 30 ہزار درہم جرمانہ کیا۔ تین ہزار ڈالر کے مساوی یہ رقم متاثرہ بچیوں کو ادا کی جائے گی۔ متاثرہ بچیوں کی عمریں سات سے چودہ سال کے درمیان بتائی جاتی ہیں۔