.

"العربيہ" نے برطانیہ میں نشریات روک دینے سے متعلق "الجزیرہ" کے دعوے کی تردید کر دی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

قطر کے سیٹلائٹ نیوز چینل الجزیرہ نے دعوی کیا ہے کہ "العربیہ" نیوز چینل برطانیہ میں اپنی نشریات روک دینے پر مجبور ہو گیا ہے۔ الجزیرہ کے مطابق یہ پیش رفت قطری نیوز ایجنسی کی جانب سے العربیہ کے خلاف شکایت دائر کیے جانے کے بعد سامنے آئی ہے۔

العربیہ نیوز چینل کے ذرائع نے الجزیرہ چینل کی اس خبر کو مضحکہ خیز قرار دیا۔

العربیہ کے مطابق یہ الجزیرہ چینل کی جانب سے اُس فیصلے کا غلط جواز پیش کرنے کی کوشش ہے جس کے تحت "العربیہ" نے ڈسٹری بیوشن کے نئے پلان کے مطابق برطانیہ کے British BSkyB پیکج میں اپنی شرکت موقوف کر دی اور اب وہ محض بدل اشتراک کے روایتی ذرائع کے بجائے جدید ڈیجیٹل پلیٹ فارمز پر توجہ مرکوز کرے گا۔

العربیہ نے جنوری کے اواخر میں برطانیہ میں British BSkyB پیکج کے تحت اپنی نشریات روک کا سلسلہ روک دیا تھا۔

الجزیرہ اور قطر کی فنڈنگ حاصل کرنے والے بعض دیگر ذرائع ابلاغ نے العربیہ کے برطانیہ میں نشریات روک دینے کے فیصلے کو "بریکنگ نیوز" کے طور پر پیش کیا جب کہ اس فیصلے پر عمل درامد دو ہفتے پہلے ہو چکا تھا۔

العربیہ کے ذرائع کے نزدیک الجزیرہ کی جانب سے العربیہ کے اس سادہ سے قدم کو بڑھا چڑھا کر پیش کرنا الجزیرہ کے پیشہ ورانہ دیوالیہ پن کا ثبوت ہے۔ اس کی بنیادی وجہ یہ ہے کہ پیشہ ورانہ طور پر الجزیرہ چینل العربیہ کا مقابلہ کرنے سے قاصر ہو چکا ہے جس کے ناظرین کی تعداد الجزیرہ سے کئی گنا زیادہ ہو چکی ہے۔

العربیہ کے ذرائع نے الجزیرہ چینل کی انتظامیہ سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ جھوٹی خبریں پھیلا کر مسابقین کی ساکھ خراب کرنے کی کوشش کے بجائے معزز طریقے سے پیشہ ورانہ اصول و ضوابط کی پاسداری کرے۔