.

شامی ادیب کی کتاب سے علمی سرقہ پر شیخ عائض القرنی کو بھاری جرمانہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

شامی ادیب ڈاکٹر عبدالرحمن پاشا (مرحوم) کے ورثاء نے سعودی عرب کے معروف عالم دین اور مبلغ شیخ عائض القرنی کے خلاف مقدمے میں کامیابی حاصل کر لی ہے۔ ڈاکٹر پاشا کے ورثاء کے وکیل نے العربیہ ڈاٹ نیٹ کو بتایا کہ شیخ قرنی نے ایک ریڈیو پروگرام کے دوران صحابہ کرام رضی اللہ عنہم اجمعین کے بارے میں گفتگو کرتے ہوئے ڈاکٹر پاشا کی کتاب "صور من حياة الصحابة" کا ایک حصّہ اپنے نام سے پیش کیا تھا۔

عدالتی حکم میں شیخ قرنی کو پابند کیا گیا ہے کہ وہ مالکانہ حقوق کی خلاف ورزی کرنے کے سبب 30 ہزار سعودی ریال کے جرمانے کی ادائیگی کریں اور دار الادب الاسلامی پبلشر کو زرِ تلافی کی مد میں 1.2 لاکھ سعودی ریال ادا کریں۔ اس کے علاوہ مذکورہ پروگرام نشر کرنے والے ریڈیو چینل کو بھی پابند کیا گیا ہے کہ وہ اس پروگرام کی اقساط دوبارہ نشر کرنے سے رک جائے۔

ڈاکٹر پاشا کے ورثاء کے وکیل کے مطابق "شیخ قرنی نے اُن کے موکلین کے والد کی کتاب سے ایک متن بنا کسی کمی بیش کے جُوں کا توں پڑھ دیا اور شیخ نے یہ سمجھا ہی نہیں کہ یہ امر کاپی رائٹ کے قانون کی خلاف ورزی میں آتا ہے۔ یہ معاملہ 1434هـ سے چل رہا تھا۔ اس دوران صلح کی کوششوں کا مطالبہ بھی کیا گیا تاہم کوئی فائدہ نہ ہوا۔ اس کے بعد عدالت میں مقدمہ دائر کیا گیا۔ تاہم ہم اس فیصلے پر اپیل دائر کریں گے کیوں کہ ہمارے نزدیک اس میں تخفیف کی گئی ہے"۔

ڈاکٹر پاشا مرحوم کے بیٹے نے بتایا کہ "شیخ قرنی نے ریڈیو پروگرام کے دوران ان کے والد کی کتاب "صور من حياة الصحابة" سے ایک طویل حصّہ لے کر پڑھا تاہم انہوں نے نہ تو کتاب کا حوالہ دیا اور نہ اس کو پڑھنے کی پیشگی اجازت لی.. بلکہ یہ دعوی کر ڈالا کہ یہ متن ان کی کاوشوں کا نتیجہ ہے"۔