.

عسکری صنعت کی سعودی کمپنی SAMI کا سال 2020ء کے لیے منصوبہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کا شمار عالمی سطح پر اُن ممالک میں ہوتا ہے جو سکیورٹی اور دفاع پر سب سے زیادہ رقم خرچ کرتے ہیں۔ سال 2016ء میں مملکت کے مجموعی اخراجات میں سے 21% عسکری سیکٹر پر خرچ کیا گیا۔

البتہ اس ضخیم خرچ کے باوجود مملکت کے مجموعی اخراجات میں مقامی سطح پر اسلحہ سازی، مرمت و دیکھ بھال اور فاضل پرزہ جات پر خرچ ہونے والی رقم 5% سے زیادہ نہیں۔

لہذا سعودی ویژن 2030ء پروگرام میں عسکری صنعت کے سیکٹر کی لوکلائزیشن کی اہمیت پر زور دیا گیا ہے۔ سال 2030ء تک مقامی سطح پر عسکری اخراجات کا تناسب 50% تک پہنچانے کی کوشش کی جائے گی۔

رواں برس مملکت کے بجٹ میں 210 ارب ریال عسکری سیکٹر کے لیے مختص کیے گئے ہیں۔

رواں سال مسلح افواج کی نمائش AFED 2018 کا ایونٹ اس بات کی واضح دلیل ہے کہ مملکت عسکری صنعت کی لوکلائزیشن کے واسطے تیز تر اقدامات کر رہی ہے۔ اس نمائش میں 50 سے زیادہ یورپی ، امریکی ، ترکی ، کوریائی اور چینی کمپنیاں سعودی عرب میں مقامی کارخانوں کے ساتھ شراکت داری اور سعودی مقامی مواد کے استعمال کے لیے موجود ہوں گی۔

SAMI

ویژن 2030 پروگرام کے اہداف پورے کرنے کے لیے سعودی عرب نے 2017ء میں عسکری صنعت کے میدان میں Saudi Arabian Military Industries (SAMI) کمپنی قائم کی۔

سعودی پبلک انویسٹمنٹ فنڈ کے پروگرام کے مطابق اس بات کی توقع ہے کہ 2020ء تک مملکت کی مجموعی مقامی پیداوار میں سامی کمپنی کا حصّہ 90 کروڑ ریال تک جا پہنچے گا۔ اس دوران روزگار کے 5 ہزار مواقع بھی پیدا ہوں گے۔

عسکری صنعت میں دنیا کی 25 بڑی کمپنیاں

سامی کمپنی کے لیے یہ ہدف مقرر کیا گیا ہے کہ اسے عسکری صںعت میں دنیا کی 25 بڑی کمپنیوں میں سے ایک بنایا جائے جو جدید ترین ٹکنالوجی اور بہترین اہلیت کے ساتھ امتیازی نوعیت کی عسکری مصنوعات تیار کرنے پر قادر ہو۔

کمپنی نے مقامی اور بین الاقوامی شراکت داروں کے ساتھ رابطہ کاری کی بنیاد پر اپنی حکمت عملی ترتیب دی ہے۔ کمپنی نے صلاحیتوں اور مہارتوں کے حصول کے لیے عالمی کمپنیوں کے ساتھ مذاکرات کا آغاز کر دیا ہے۔

سعودی کمپنی سامی نے اپنے کام میدان کے طور پر درجِ ذِیل شعبوں کا تعین کیا ہے :

- ریڈار، سینسرز، راؤٹرز اور رابطوں اور کمانڈ اینڈ کنٹرول کے نظاموں کی تیاری.

- درمیانے درجے کے اور بھاری ہتھیاروں کے ساتھ توپ خانے اور گولہ بارود کی تیاری.

- ٹینکوں اور عسکری گاڑیوں کے لیے بنیادی نظام ، فاضل پرزہ جات اور ساز و سامان کی تیاری.

- عسکری طیاروں کے فاضل پرزہ جات اور ساز و سامان کی تیاری ، ڈرون طیاروں کی تیاری اور ان کی دیکھ بھال.

- جدید ترین ٹکنالوجی کی تیاری مثلا سائبر سکیورٹی اور گائیڈڈ ہتھیار وغیرہ.