.

حج کو سیاست سے آلودہ کرنا ناقابل قبول ہے : ملائیشیا کی اسلامی انجمن کے سربراہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ملائیشیا میں "خیر امّۃ" گلوبل فاؤنڈیشن کے سربراہ ڈاکٹر فتح الباری یحیی نے اُن خبروں کی مذمت کی ہے جن میں دعوی کیا گیا کہ "حرمین شریفین کی سعودی انتظامیہ کی نگرانی کے لیے ملائیشیا میں ایک بین الاقوامی ادارے کا قیام عمل میں لایا گیا ہے"۔ ڈاکٹر فتح کے مطابق سیاسی تنازعات کے واسطے حج کو سیاست سے آلودہ کرنا ناقابل قبول عمل ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ سے خصوصی گفتگو کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ "مذکورہ ادارے کے قیام سے متعلق خبر کی تردید کے سلسلے میں ہم نے ملائیشیا کی 46 اسلامی انجمنوں کا مشترکہ بیان جاری کیا۔ اس طرح کی افواہ اور جھوٹی خبر کا پھیلانا ملائیشیا میں مذموم عمل شمار کیا جاتا ہے۔ حج کے سیزن کو کامیاب بنانے کے لیے خادم حرمین شریفین کی قیادت میں سعودی عرب کی جانب سے کی جانے والی کوششوں کے سب ہی لوگ معترف ہیں۔ حج کے حوالے سے اسلامی ممالک کی تجاویز اور آراء وصول کرنے کے لیے سعودی عرب مختلف ایونٹس کا انعقاد کرتا ہے۔ لہذا اپنی آراء کا اظہار ان میں شرکت کر کے ہونا چاہیے"۔

ڈاکٹر فتح نے عرب میڈیا کی جانب سے مذکورہ ادارے کے مبینہ طور پر ملائیشیا میں ہونے کی خبر سے فائدہ اٹھانے کی کوشش کی مذمت کی۔ انہوں نے واضح کیا کہ ایسا کوئی دستاویز یا کاغذ موجود نہیں جو اس طرح کے کسی ادارے کے ملائیشیا میں سرکاری طور پر اندراج کو ثابت کرے۔ ڈاکٹر فتح نے درخواست کی کہ "مہربانی فرما کر اپنے سیاسی تنازعات میں ملائیشیا کو نہ گھسیٹ کر لائیں"۔

واضح رہے کہ ملائیشیا میں لیگ آف اسلامک ایسوسی ایشنز نے اُن نیوز چینلوں اور ویب سائٹوں پر نظر رکھی جنہوں نے "حرمین کی سعودی انتظامیہ کی نگرانی کے لیے ملائیشیا میں ایک ادارے کے قیام" سے متعلق جھوٹی خبر پھیلائی، ان میں قطر کا الجزیرہ چینل سرفہرست تھا۔