.

یمن میں ایرانی مداخلت کے واضح ثبوت موجود ہیں: انور قرقاش

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

متحدہ عرب امارات کے وزیر مملکت برائے امور خارجہ انور قرقاش نے کہا ہے کہ وقت گزرنے کے ساتھ یمن میں ایران کی مداخلت کے ثبوت مزید واضح ہوکر سامنے آتے جا رہے ہیں۔

انور قرقاش نے بدھ کو ٹویٹر پر جاری کردہ بیان میں اپنے اس مؤقف کا ا عادہ کیا ہے کہ سعودی عرب نے یمن میں مداخلت کا بالکل درست فیصلہ کیا تھا۔انھوں نے کہا کہ ’’یو اے ای عرب اتحاد کے ساتھ کھڑا ہے اور ہمارے بچے اپنے وطن اور خطے کے مستقبل کے لیے اپنی جانوں کے نذرانے پیش کررہے ہیں‘‘۔

انھوں نے یمن میں فوجی مداخلت کے بارے میں لکھا ہے کہ ’’اس میں کوئی شک نہیں یہ ایک مشکل آزمائش تھی لیکن یہ ناگزیر تھی۔اس کا حتمی مقصد واضح اور تزویراتی ہے اور وہ جزیرہ نما عرب میں آنے والی نسلوں کے لیے سلامتی اور استحکام کا حصول ہے‘‘۔

انور قرقاش نے اپنی بات جاری رکھتے ہوئے مزید کہا ہے کہ ’’اس تزویراتی مقصد کے حصول کے لیے الریاض کی قیادت میں عرب اتحاد اہم سیاسی ، فوجی ،انسانی اور سکیورٹی کے مشن انجام دے رہا ہے ،ان کے ذریعے ہم ایک ایسے مستحکم اور ابھرتے ہوئے یمن کا مقصد حاصل کر لیں گے جو اپنے قدرتی ماحول میں آگے بڑھے گا‘‘۔