.

ترکی میں امریکی سفارت خانے پرحملے کا منصوبہ ناکام، چار عراقی گرفتار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ترک حکام نے کل سوموار کے روز انقرہ میں قائم امریکی سفارت خانے پرحملے کا خطرناک منصوبہ ناکام بناتے ہوئے چار مشتبہ عراقی شدت پسندوں کو حراست میں لے لیا ہے۔

ترکی کے ذرائع ابلاغ کے مطابق ایک روز قبل انقرہ میں قائم امریکی سفارت خانے کی طرف سے حملے کے خطرے پر انتباہ کیا گیا تھا جس کے بعد ترک پولیس نے ساحلی شہر شمسون میں چھاپہ مارا، جہاں سے چار مشتبہ ملزمان کو حراست میں لیا گیا ہے۔

قبل ازیں سوموار کے روز انقرہ میں امریکی سفارت خانے کی طرف سے جارہ کردہ ایک بیان میں کہا گیا تھا کہ سیکیورٹی کے خطرے کے پیش نظر دن کو سوائے ہنگامی سروسز کے باقی تمام پبلک ڈیلنگ معطل رہے گی۔ تاہم سفارت خانے کی طرف سے اس دھمکی آمیز پیغام کی کیفیت بیان نہیں کی گئی اور نہ یہ بتایاگیا کہ آیایہ دھمکی کس گروپ کی طرف سے دی گئی ہے۔

اتوار کو انقرہ میں واقع امریکی سفارت خانے کی جانب سے جاری ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ سفارت خانہ پیر کو بند رہے گا اور صرف ہنگامی سہولتیں ہی فراہم کی جائیں گی۔

بیان کے مطابق پیر کو ہونے والے تمام ویزہ انٹرویو اور معمول کی دیگر مصروفیات منسوخ کردی گئی ہیں۔ بیان میں کہا گیا ہے کہ سفارت خانہ دوبارہ کھلنے اور سفارتی خدمات کی بحالی سے متعلق اعلان بعد میں کیا جائے گا۔

اپنے بیان میں امریکی سفارت خانے نے ترکی میں موجود امریکی شہریوں کو ہجوم میں جانے اور سفارت خانے کی عمارت کے نزدیک آنے سے گریز کا مشورہ دیا ہے۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ امریکی شہری معروف سیاحتی مراکز اور پرہجوم مقامات پر اپنی سکیورٹی کے متعلق ہوشیار رہیں۔

انقرہ کے گورنر کے دفتر سے جاری ہونے والے ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ بعض امریکی ذرائع سے ملنے والی انٹیلی جنس اطلاعات کے مطابق امریکی سفارت خانے یا ان مقامات پر دہشت گرد حملے کا خدشہ ہے جہاں امریکی شہری قیام پذیر ہوں۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ ان اطلاعات کے بعد سکیورٹی کے اضافی اقدامات کیے جارہے ہیں۔

ترکی میں واقع امریکی سفارت خانہ اور قونصل خانے اس سے قبل بھی سکیورٹی خدشات کی بنیاد پر بند کیے جاتے رہے ہیں۔

امریکی حکام نے تاحال حالیہ خطرے کی تفصیل نہیں بتائی ہے۔