شامی فوج کی الغوطہ پر پیش قدمی، 45 افراد ہلاک

شامی فوج نے مشرقی الغوطہ کا ایک حصہ باغیوں سے چھین لیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

شامی حکومت کی افواج نے دمشق کے نواح میں موجود زرعی زمین سمیت دیگر اراضی کو حزب اختلاف کے قبضے سے چھڑوا لی ہے۔

بشار الاسد کی حکومت مشرقی الغوطہ کو باغیوں سے آزاد کروانے کے لئے شدید بمباری اور گولہ باری کا سہارا لے رہی تاکہ زمینی فوج کو اتارنے کی راہ ہموار ہوسکے۔

شام میں مقامی صورتحال پر نظر رکھنے والے مانیٹرنگ ادارے شامی آبزرویٹری کے مطابق بمباری کے نتیجے میں پچھلے دو ہفتوں کے دوران سینکڑوں افراد ہلاک ہوچکے ہیں جبکہ گزشتہ روز بدھ کے دن 45 افراد حکومتی اور روسی طیاروں کی بمباری کا نشانہ بن کر جانوں سے ہاتھ دھو بیٹھے تھے۔

علاقے میں موجود ڈاکٹروں اور رہائشیوں کے مطابق الغوطہ میں شدید شیلنگ کی جارہی ہے اور متعدد لوگوں کو سانس لینے میں دشواری کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔ مقامی رہائشیوں نے الزام عاید کیا ہے کہ ممکنہ طور پر حکومتی بمباری میں کیمیائی گیس کا استعمال بھی کیا گیا ہے۔

شامی آبزرویٹری کے مطابق شامی حکومت کے فوجیوں نے رات گئے تک مشرقی الغوطہ کے آدھے علاقے پر قبضہ کر لیا تھا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں