سوڈان میں پہلی مرتبہ دُلہن اپنے نکاح کے موقع پر مسجد میں آ گئی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سوڈان میں صدر کے معاون اور جنرل پیپلز کانگریس پارٹی کے ایک اہم رکن ابراہیم السنوسی نے جمعے کے روز اُس وقت لوگوں کو حیران کر ڈالا جب انہوں نے اپنی بیٹی کے نکاح کے موقع پر دلہن کو مسجد کے اندر بلا کر مطالبہ کیا کہ وہ گواہان کے سامنے شادی کے لیے اپنی آمادگی کا اعلان کرے۔ سوڈان میں عام رواج کے برخلاف السنوسی کی بیٹی مسجد میں آئی اور خواتین کے لیے مخصوص جگہ پر بیٹھ گئی۔ سوڈان میں یہ پہلا موقع ہے کہ کوئی لڑکی اپنے نکاح کے موقع پر براہ راست مسجد کے اندر آ گئی۔

اس سے قبل مرحوم سوڈانی رہ نما حسن الترابی نے بھی اپنی بیٹی کی شادی پر اُسے گواہان کے سامنے بلایا تھا تاہم وہ نکاح مسجد کے اندر نہیں ہوا تھا۔

سوڈان میں آئینی ترامیم کے بعد لڑکی کو خود اپنا نکاح کرنے اور ولی کی موجودگی میں نکاح کی محفل میں شرکت کی اجازت مل جانے کے بعد ملک میں بڑا تنازع کھڑا ہو گیا ہے۔ اسلامی فقہ کمپلیکس کی جانب سے اس اقدام کو اسلامی شریعت کے خلاف قرار دینے کا فتوی جاری ہو چکا ہے۔

سوڈان میں عام رواج کے مطابق نکاح مسجد میں ہوتا ہے اور اس میں خواتین کی شرکت نہیں ہوتی ہے۔ لڑکی کا والد یا خاندان کی طرف سے منتخب فرد دلہن کی طرف سے وکیل ہوتا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں