مصری فوج کی سیناء میں کارروائی میں 16 دہشت گرد ہلاک

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

مصری فوج نے جزیرہ نما سیناء میں داعش کے خلاف جاری کارروائی میں گذشتہ چار روز کے دوران میں 16 انتہا پسندوں کو ہلاک کرنے کی اطلاع دی ہے ۔ان کے ساتھ جھڑپ میں ایک فوجی اور ایک افسر بھی مارا گیا ہے۔

مصری فورسز صدر عبدالفتاح السیسی کے حکم پر اسرائیل اور غزہ کی پٹی کی سرحد کے ساتھ واقع شورش زدہ علاقے شمالی سیناء میں کارروائی کررہی ہیں۔ انھوں نے نومبر میں سیناء ہی میں ایک مسجد میں تباہ کن حملے میں 300 سے زیادہ نمازیوں کے جاں بحق ہونے کے بعد سکیورٹی فورسز کو تین ماہ میں جنگجوؤں کو شکست دینے کا حکم دیا تھا۔عبدالفتاح السیسی اسی ماہ دوبارہ صدر منتخب ہونے کے لیے امیدوار ہیں اور وہ اس سے قبل شمالی سیناء سے شورش پسندی کا مکمل خاتمہ چاہتے ہیں۔

مصری فوج جزیرہ نما سیناء کے علاوہ وسطی نیل ڈیلٹا اور لیبیا کی سرحد کے ساتھ واقع مغربی صحرا میں بھی ’’ آپریشن سیناء 2018ء ‘‘ کے نام سے جنگجوؤں کے خلاف کارروائی کررہی ہے اور اس کے دوران میں اس نے اب تک داعش سے وابستہ بیسیوں جنگجوؤں کی ہلاکت اور سیکڑوں کو گرفتار کرنے کے دعوے کیے ہیں۔

ان کی پہلی مدت صدارت میں سکیورٹی فورسز سیناء میں بالخصوص اور ملک کے دوسرے علاقوں میں بالعموم مسلسل انتہا پسندوں اور جنگجوؤں کے خلاف کارروائی کرتی رہی ہیں لیکن وہ داعش سے وابستہ جنگجوؤں کا مکمل طور پر خاتمہ نہیں کرسکی ہیں۔شمالی سیناء سے تعلق رکھنے والے داعش سے وابستہ جنگجو ملک کی سکیورٹی فورسز ،قبطی عیسائیوں اور ان کی عبادت گاہوں پر وقفے وقفے سے تباہ کن حملے کرتے رہےو ہیں۔

مصری فوج کا کہنا ہے کہ داعش نے عراق اور شام میں پے درپے شکستوں کے بعد اپنے جنگجوؤں کو سیناء میں منتقل کرنے کی کوشش کی تھی اور اس کے پاس اس امر کے شواہد موجود ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں