ٹوئٹر پر فرضی فالوورز کے معاملے میں بھارت کے مودی جی دنیا میں پہلے نمبر پر!

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

اپنی سیاسی کامیابی کے لئے سوشل میڈیا کا بہترین استعمال کرنے کے لئے مشہور بھارتی وزیراعظم نریندر مودی کے حوالے سے یہ حقیقت سامنے آئی ہے کہ ان کے ساٹھ فیصد سے زائد ٹوئٹر فالوورز فرضی ہیں۔

ایک سروے کے مطابق فرضی فالوورز کے معاملے میں وزیر اعظم نریندر مودی نے دنیا کے تمام رہنماؤں کو پیچھے چھوڑ دیا ہے۔ لیکن اس ریکارڈ سے ان کے مداحوں کو خوشی نہیں ہوگی، جو بھارت میں ہر بڑی کامیابی کا سہرا مودی کے سر باندھتے دکھائی دیتے ہیں۔ اس سروے کے مطابق فرضی فالوورز کے معاملے میں مودی کے بعد 59 فیصد کے ساتھ مسیحیوں کے روحانی پیشوا پوپ فرانسس دوسرے نمبر پر ہیں۔ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ 37 فیصد کے ساتھ چوتھے نمبر پر اور میکسیکو کے صدر 47 فیصد کے ساتھ تیسرے نمبر پر ہیں۔

بھارت سے شائع ہونے والے انگلش جریدے ’آوٹ لُک‘ کی طرف سے کرائے گئے سروے میں انکشاف ہوا ہے کہ ٹوئٹر پر وزیراعظم مودی کو فالو کرنے والے چالیس ملین یا چار کروڑ فالوورز میں سے ڈھائی کروڑ فرضی ہیں۔’آوٹ لک‘ نے اپنی رپورٹ میں کہا ہے کہ تیس دن سے بھی کم مدت میں وزیراعظم مودی کے فالوورز کی تعداد میں سات ملین کا اضافہ ہوگیا تھا جس کے بعد اس نے سروے کرانے کا فیصلہ کیا تو پتہ چلا کہ ’’یہ دراصل تعداد کا کھیل ہے۔ فالوورز کی تعداد بڑھانا اور لائیک کے ذریعے مقبولیت حاصل کرنا اب ایک مکمل پیشہ بن چکا ہے۔‘‘

رپورٹ کے مطابق گوکہ فرضی فالوورز کے لحاظ سے وزیر اعظم مودی دنیا میں سر فہرست ہیں تاہم بھارت میں ان کا نمبر چوتھا ہے۔ فرضی فالوورز کے معاملے میں پہلا نمبر کانگریس پارٹی کے صدر راہل گاندھی کا ہے۔ ان کے فرضی فالوورز کی تعداد 69 فیصد ہے لیکن مجموعی فالوورز کے لحاظ سے وہ مودی کے مقابلے میں کافی پیچھے ہیں۔ ’آوٹ لک‘ کے مطابق راہل کے 61 لاکھ 15 ہزار فالوورز میں سے فرضی فالوورز کی تعداد 37 لاکھ ہے۔

راہل، دہلی کے وزیر اعلیٰ اروند کیجریوال سے بھی بہت پیچھے ہیں جن کے فرضی فالوورز کی تعداد 65 لاکھ کے قریب ہے جو ان کے مجموعی فالوورز کا پچاس فیصد ہے۔ حکمراں بھارتیہ جنتا پارٹی کے قومی صدر امت شاہ کے ایک کروڑ سے زیادہ فالوورز میں سے فرضی فالوورز کی تعداد 67 فیصد ہے جب کہ کانگریس کے رکن پارلیمان اور سابق وفاقی وزیر ششی تھرور کے فرضی فالوورز کی تعداد 62 فیصد ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں