مصر سوڈان اور ایتھو پیا سے مل کر دریائے نیل سے فائدہ اٹھانا چاہتا ہے: صدر السیسی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

مصری صدر عبدالفتاح السیسی نے کہا ہے کہ ان کا ملک سوڈان اور ایتھوپیا سے مل کر دریائے نیل سے اجتماعی فائدہ حاصل کرنا چاہتا ہے اور وہ اس سلسلے میں ان سے مل کر کام کر رہا ہے۔

انھوں نے یہ بات قاہرہ میں سوموار کے روز سوڈانی صدر عمر حسن البشیر سے ملاقات کے بعد مشترکہ نیوز کانفرنس میں کہی ہے۔انھوں نے مصر اور سوڈان کے درمیان مختلف شعبوں میں دوطرفہ تعاون بڑھانے کے لیے کوششوں کا اعلان کیا ہے۔

اس موقع پر صدر عمر البشیر نے کہا کہ سوڈان مصر کے ساتھ کے کسی بھی اختلاف کو طے کرنے کو تیار ہے اور وہ اس کی سلامتی کا خواہاں ہے۔

انھوں نے دونوں ملکوں کے درمیان تاریخی برادرانہ تعلقات کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ مصر اس وقت انتخابات کے دور سے گزر رہا ہے اور ان کا وفد مصر کے استحکام اور صدر السیسی کی حمایت کے لیے بروقت یہ دورہ کررہا ہے۔

سوڈانی صدر کے اس دورے سے قبل مصر کے قائم مقام انٹیلی جنس چیف میجر جنرل عباس کامل نے خرطوم کا دورہ کیا تھا۔انھوں نے سوڈانی وزیر خارجہ ابراہیم غندور اور دوسرے اعلیٰ عہدے داروں سے ملاقات کی تھی اور ان سے دونوں ملکوں کے درمیان دوطرفہ تصفیہ طلب مسائل کے بارے میں تبادلہ خیال کیا تھا۔

مصری صدر عبدالفتاح السیسی نے حال ہی میں ایتھوپیا کے دارالحکومت ادیس ابابا میں افریقی سربراہ اجلاس کے موقع پر بھی سوڈانی ہم منصب عمر حسن البشیر سے ملاقات کی تھی ۔انھوں سے دونوں ملکوں کے درمیان تعلقات کے فروغ پر تبادلہ خیال کیا تھا اور موجودہ علاقائی صورت حال سے درپیش چیلنجز سے نمٹنے کے لیے دوطرفہ تعاون اور روابط کو مضبوط بنانے کے لیے کوششوں کی بحالی سے اتفاق کیا تھا‘‘۔

دونوں صدور نے دریائے نیل کے پانی کے تنازع سمیت دوطرفہ امور کو طے کرنے کے لیے ایک مشترکہ وزارتی کمیٹی کی تشکیل سے بھی اتفاق کیا تھا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں