.

تفریح کی صنعت سے وابستہ کون سی امریکی کمپنیاں سعودی عرب آرہی ہیں؟

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب نے تفریح کی صنعت کے قیام کے لیے امریکا کی مختلف فرموں سے متعدد سمجھوتے طے کیے ہیں اور ان کے تحت ہالی ووڈ کے سرمایہ کاروں اور دوسرے اہم کرداروں سمیت ڈھائی سو کے لگ بھگ نمائندے سعودی عرب میں تفریح کے شعبے میں سرمایہ کاری کریں گے اور اپنی شاخیں کھولیں گے۔

بیورلے ہلز کیلی فورنیا میں حال ہی میں سعودی جنرل انٹرٹینمنٹ اتھارٹی ( جی ای اے) کے زیر اہتمام کانفرنس میں مملکت کے سرمایہ کاروں اور نجی شعبے کے لیڈروں نے امریکی کمپنیوں اور افراد کو سرمایہ کاری اور شراکت داری میں ہر طرح کی سہولتیں مہیا کرنے کا وعدہ کیا ہے۔

جریدے ورائٹی کی رپورٹ کے مطابق حال ہی میں تشکیل کردہ ایک بورڈ کو بھی تفریحی شعبے کو وسعت دینے کے لیے اقدامات کی ذمے داری سونپی گئی ہے۔اس کانفرنس میں معیارِ زندگی بہتر بنانے کے لیے اقدامات پر بھی تبادلہ خیال کیا گیا تھا۔

دنیا کی سب سے بڑی مووی تھیٹرکمپنی اے ایم سی نے بدھ کو یہ اطلاع دی تھی کہ اس کو سعودی عرب میں مووی تھیٹرز چلانے کے لیے لائسنس جاری کردیا گیا ہے۔

اس کے علاوہ بھی ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان کے دورۂ امریکا کے موقع پر سعودی عرب میں تفریحی شعبے کو ترقی دینے کے لیے مختلف کمپنیوں سے سمجھوتے طے کیے گئے ہیں۔ان میں سے بعض کا مختصراحوال کچھ یوں ہے:

امریکی تفریحی کمپنی کرک ڈیو سولیل اس سال سعودی عرب کے قومی دن کے موقع پر ایک شو کا اہتمام کرے گی۔

نیشنل جٖغرافیک ایکسپلورر اپنے ’’اوشین اوڈیسی ‘‘ کے سعودی عرب میں دس مراکز قائم کرے گی ۔ان میں ایک دارالحکومت الریاض میں 2019ء میں کھولا جائے گا۔

فلوریڈا سے تعلق رکھنے والی فیلڈ انٹرٹینمنٹ نے جی ای اے کے ساتھ طویل المیعاد شراکت داری سے اتفاق کیا ہے۔ہالی ووڈ کی بعض کمپنیوں نے بھی سعودی عرب میں تفریحی مراکز کے قیام کے لیے سمجھوتے طے کیے ہیں۔سعودی عرب کا سرکاری سرمایہ کاری فنڈ ایک کمپنی اینڈیوور کے 40 سے 50 کروڑ ڈالرز مالیت کے حصص کی خرید کے لیے بھی کوشاں ہے۔

اس جریدے کی رپورٹ کے مطابق جی ای اے کے چیف ایگزیکٹو فیصل بافراط کا کہنا تھا کہ تفریح کے شعبے میں ہم بالکل صفر سے کام کا آغاز کررہے ہیں اور ہم سعودی عرب میں پہلے واٹر اور تھیم پارک کے قیام کی بھی منصوبہ بندی کررہے ہیں۔