.

یمن کی الحدیدہ بندرگاہ کو بین الاقوامی کنٹرول میں دیا جائے: سعودی عرب کا مطالبہ

"حوثیوں اور ایران کے خلاف بین الاقوامی قانون کی خلاف ورزیوں پر کارروائی کی جائے"

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

اقوام متحدہ میں سعودی عرب کے مستقبل مندوب عبداللہ المعلمی نے عالمی ادارے کے سیکریٹری جنرل آنتونیو گویٹرس اور سیکیورٹی کونسل کے سربراہ کے نام ایک خط تحریر کیا ہے جس میں انھیں حال ہی میں سعودی عرب کے ایک تیل بردار جہاز پر یمنی حوثیوں کے حملے کی بابت تفصیل سے آگاہ کیا گیا ہے۔

انھوں نے اپنے خط میں یمنی حوثیوں اور ایران کے خلاف بین الاقوامی قانون کی خلاف ورزیوں کارروائی کا مطالبہ کیا ہے۔ خط میں اس بات کی ضرورت پر زور دیا گیا ہے کہ الحدیدہ بندرگاہ میں بڑھتی ہو لاقانونیت پر قابو پانے کے لئے اسے بین الاقوامی نگرانی میں دے دیا جائے۔

خط میں سیکیورٹی کونسل سے متعلق قرارداد 2216 اور 2231 پر عمل کے لئے مناسب کارروائی کا مطالبہ بھی سامنے آیا تاکہ باب المندب اور بحیرہ احمر میں بین الاقوامی جہاز رانی کو محفوظ بنایا جا سکے۔

یمن کی آئینی حکومت کی بحالی کے لیے سرگرم فوجی اتحاد کے ترجمان کرنل ترکی المالکی نے اس سے قبل بتایا تھا کہ منگل کی دوپہر ایرانی حمایت یافتہ حوثیوں باغیوں کے زیر کنٹرول یمنی بندرگاہ الحدیدہ کی مغربی سمت بین الاقوامی پانیوں میں ایک سعودی آئل ٹینکر کو نشانہ بنایا گیا۔

ترکی المالکی کے مطابق حوثیوں کی یہ کوشش اتحادی فوج کے ایک بحری جہاز نے فوری مداخلت کرتے ہوئے ناکام بنا دی۔ حوثی حملے میں سعودی آئل ٹینکر کو معمولی نقصان پہنچا، جس کی ضروری مرمت کے بعد ٹینکر اتحادی فوج کے لڑاکا بحری جہاز کی نگرانی میں اپنی منزل کی جانب روانہ ہو گیا۔