حوثیوں نے ایران کی وجہ سے یمن میں سیاسی عمل مشکل تر بنا دیا : سعودی وزیر خارجہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

سعودی وزیر خارجہ عادل الجبیر نے کہا ہے کہ یمن میں کسی بھی سیاسی عمل کی کامیابی کا انحصار حوثی ملیشیا پر ہے۔

انھوں نے یہ بات دارالحکومت الریاض میں اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل انتونیو گوٹیریس کے ساتھ منگل کے روز مشترکہ نیوز کانفرنس میں کہی ہے۔انھوں نے کہا کہ ’’ سعودی عرب یمن میں جنگ نہیں چاہتا تھا لیکن حوثی ملیشیا کی یمن کی قانونی حکومت کے خلاف بغاوت کے بعد اس کو بہ امر مجبوری جنگ میں شریک ہونا پڑا تھا‘‘۔

عادل الجبیر نے کہا کہ ایران کی یمن میں مداخلت اور غیر لچکدار رویے کی وجہ سے حوثیوں نے ملک میں سیاسی عمل کو مشکل تر بنا دیا ہے۔

اس موقع پر انتونیو گوٹیریس نے کہا کہ’’ یمن ہو یا شام ،ان ممالک میں جاری بحرانوں کا سیاسی کے سوا کوئی اور حل نہیں ہے۔انھیں سیاسی طریقے سے ہی حل کیا جانا چاہیے‘‘۔

انھوں نے صحافیوں کو بتایا کہ یمن میں حالیہ ہفتوں کے دوران میں انسانی امداد کی تقسیم میں نمایاں بہتری آئی ہے۔

سعودی وزیرخارجہ نے شام کے حوالے سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ اسلامی فوجی اتحاد کو وہاں دہشت گردی کے خلاف جنگ کے لیے فوجی دستے بھیجنے کی پیش کش کی گئی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں