.

لیبیا کے طیارے کے سمندر میں گر جانے کے اندیشے پر مسافروں میں کھلبلی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

لیبیا میں اندرون ملک پرواز کے دوران ایک فضائی طیارے کے مسافروں میں اُس وقت خوف و دہشت اور افراتفری کی حالت پیدا ہو گئی جب قریب تھا کہ طیارہ شدید ہچکولوں کے سبب سمندر میں جا گرتا۔

تفصیلات کے مطابق "البراق" فضائی کمپنی کا یہ طیارہ اتوار کے روز بنغازی شہر سے دارالحکومت طرابلس جا رہا تھا۔

طیارے کے اندر بنائے گئے ایک وڈیو کلپ میں مسافروں کی پریشانی کی حالت ظاہر ہو رہی ہے۔ اس دوران چیخ و پکار، تکبیر کی صدائیں اور اللہ سے گڑگڑا کر مدد مانگنے کی آوازیں سنائی دے رہی ہیں۔ اس موقع پر مسافروں کو اپنی موت سامنے کھڑی نظر آ رہی تھی۔

لیبیا کے مرکزی بینک کے ایک عہدے دار عمران الشایبی بھی اس موقع پر طیارے میں سوار مسافروں میں شامل تھے۔ الشایبی نے سلامتی کے ساتھ منزل مقصود پر پہنچ جانے کے بعد بتایا کہ بنغازی کے ہوائی اڈے سے اڑان بھرنے کے چند منٹوں کے بعد ہی طیارہ شدید ہوا کی لپیٹ میں آ گیا اور قریب تھا کہ طیارہ کپتان کے کنٹرول سے باہر چلا جائے کیوں کہ طیارہ اچانک نیچے جانے لگا اور اس دوران اس کے پر دائیں اور بائیں جھکتے رہے۔

الشایبی کے مطابق یہ صورت حال تقریبا 15 منٹ تک جاری رہی۔ اس دوران طیارے میں کہرام سا مچ گیا اور تمام مسافروں کو یقین ہو چلا تھا کہ اب ان کی زندگی ختم ہونے والی ہے۔ تاہم کپتان نے طیارے کا کنٹرول دوبارہ حاصل کر لیا اور طیارہ اپنا سفر بحفاظت مکمل کر کے طرابلس کے ہوائی اڈے پر اُتر گیا۔