یمنی فوج سے جھڑپوں میں 17 حوثی ہلاک ،حیس سے ملیشیا نے سیکڑوں مکین بے گھر کردیے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

یمن کے شمالی صوبے الجوف کے ضلع المصلوب میں قومی فوج کے ساتھ جھڑپوں میں ایک حوثی کمانڈر سمیت سترہ جنگجو ہلاک ہوگئے ہیں۔

ذرائع کے مطابق المصلوب کے دو علاقوں الساقیہ اور اللاسن میں قومی فوج اور حوثی ملیشیا کے درمیان خون ریز لڑائی ہوئی ہے جس کے نتیجے میں حوثی جنگجوؤں کا لیڈر صادق الحاج بن نسعہ اپنے سات ساتھیوں ہلاک ہوگیا ہے اور متعدد جنگجو زخمی بھی ہوئے ہیں۔

دس حوثی جنگجو اسی ضلع کے پہاڑی علاقے حام میں لڑائی میں ہلاک ہوئے ہیں۔سرکاری فوج نے اس محاذ پر دو مسلح جنگجوؤں کو گرفتار کر لیا ہے اور بھاری مقدار میں اسلحہ اور گولہ بارود بھی پکڑ لیا ہے۔

ادھر حوثی ملیشیا نے صوبہ الحدیدہ کے جنوب میں واقع شہر حیس کے آس پاس متعدد دیہات کا محاصرہ کر لیا ہے اور وہاں سے سیکڑوں مکینوں کو بے گھر کردیا ہے۔

مقامی ذرائع نے بتایا ہے کہ حوثی ملیشیا نے حیس شہر کے شمال اور مغرب میں واقع دیہات کے مکینوں کو جبری ان کے گھروں سے بے دخل کرنے کی مہم شروع کررکھی ہے اور انھوں نے چار دیہات زوبل ، باب اللفج ، بنی العلیلی اور بنی الیر شی سے ان کے مکینوں کو نکال باہر کیا ہے۔ مردوں کو وہ فوجی تربیت کے لیے کیمپوں میں لے جارہے ہیں۔

ان ذرائع نے بتایا ہے کہ حوثی ملیشیا نے ان دیہات کو بموں سے اڑانے کی دھمکی دی تھی جس کے بعد لوگ جانیں بچانے کے لیے اپنے گھروں سے باہر نکل آئے تھے۔انھیں جنگی مراکز میں منتقل کرنے کی تیاری کی جارہی ہے تاکہ انھیں حیس شہر میں تعینات یمنی فورسز کے مد مقابل جنگ میں جھونکا جاسکے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں