.

حوثیوں کی یمنی عوام پر ’زکوٰۃ خمس‘ نافذ کرنے کے لیے قانون سازی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

کئی سال کی خانہ جنگی سے تنگ یمن کے عوام پر ایران نواز حوثی باغیوں نے اپنی مرضی کی شریعت اور قانون مسلط کرنے کی سازشیں بھی جاری رکھی ہوئی ہیں۔

یمن میں حوثیوں کے ایک پارلیمانی ذریعے کا کہنا ہے کہ حوثی حکام نے زکوٰۃ سے متعلق مروجہ قانون میں اپنی نام نہاد پارلیمنٹ کے ذریعے ترمیم کی کوششیں شروع کی ہیں۔ ترمیم کے ذریعے حوثی یمنی عوام پر ’زکوٰۃ خمس‘ یعنی آمدن کا بیس فی صد آل نبی حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم اور ان کی اولاد میں تقسیم کیا جائے گا۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق ’زکوٰۃ ‘ خمس کاقانون نافذ کرنے کےلیے حوثی زیدی شیعہ مسلک کی تاویلات کا سہارا لے رہا ہے۔

حوثی رکن پارلیمان احمد سیف حاشد نے سماجی رابطے کی ویب سائیٹ ’فیس بک‘ پر پوسٹ اپنے بیان میں کہا کہ زکوٰۃ کے قانون میں ترمیم کے بعد عوام سے حاصل ہونے والی زکواۃ میں سے بیس فی صد حوثی لیڈرشپ اور اس ن کے معاونین کو دی جائے گی۔

حاشد کا کہنا ہے کہ ترمیم آئینی بل میں کہا گیا ہے کہ آئین کے آرٹیکل 31 کے تحت خمس کے مصارف سورۃ الانفال کی آیت41 ’ لله ولرسوله ولذي القربى واليتامى والمساكين وابن السبيل‘ کے تحت مقرر کیے گئے ہیں۔

خیال رہے کہ یمن میں حوثی باغیوں کے ساتھ سابق مقتول صدر علی صالح کی جماعت کے چند ایک ارکان پارلیمنٹ شامل ہیں۔ حوثی اس نام نہاد پارلیمان کو اپنے قوانین کی تیاری اور ان کے نفاذ کے لیے ایک آلہ کار کے طور پر استعمال کررہے ہیں۔