ڈونلڈ ٹرمپ کی ولادی میرپیوتن کودورہ امریکا کی دعوت

امریکا سے تصادم کا کوئی خطرہ نہیں:لافروف

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

روسی وزیرخارجہ سیرگئی لافروف نے تصدیق کی ہے کہ امریکی صدر دونلڈ ٹرمپ نے صدر ولادی میرپیوتن کو وائیٹ ہاؤس کےدورے اور ملاقات کی دعوت دی ہے۔ لافروف کا کہنا ہے صدر پیوتن ڈونلڈ ٹرمپ سے ملاقات کے لیے تیار ہیں۔

ایک بیان میں روسی وزیرخارجہ نے کہا کہ دونوں ملکوں کے صدر کا سو فی صد اتفاق ہے کہ امریکا اور روس ایک دوسرے کے خلاف فوجی تصادم کی طرف نہیں جائیں گے۔

گذشتہ ہفتے کے روز شام میں کی گئی فوجی کارروائی کے بارے میں بات کرتے ہوئے لافروف نے کہا کہ ماسکو نے واشنگٹن کو شام میں سرخ لکیر کے بارے میں آگاہ کردیا تھا۔ اس حملے میں روس کی وضع کردہ سرخ لکیر کو عبور نہیں کیا گیا۔

انہوں نے مزید کہا کہ شام پر امریکی حملے کے بعد روس اسد رجیم کو ‘ایس 300‘ میزائل نظام نہ دینے کے عہدے کا پابند نہیں رہا ہے۔

خیال رہے کہ روسی وزیرخارجہ کی طرف سے یہ بیان ایک ایسے وقت میں سامنے آیا ہے جب امریکی قومی سلامتی کے مشیر جون بولٹن اور واشنگٹن میں روسی سفیر اناتولی انتونوف کے درمیان جمعرات کی شام ملاقات ہوئی۔ دونوں ملکوں کے درمیان شام میں حملے کے بعد پیدا ہونے والی کشیدگی کے دوران یہ پہلا براہ راست رابطہ ہے۔ امریکی قومی سلامتی کے مشیر اور روسی سفیر کے درمیان ہونے والی بات چیت میں دو طرفہ کشیدگی اور تعلقات کو معمول پر لانے پر بات چیت کی گئی۔

روس اور امریکا کےدرمیان تازہ کشیدگی اس وقت پیدا ہوئی تھی جب گذشتہ ہفتے کے روز امریکا، فرانس اور برطانیہ میں شام میں متعدد مقامات پر میزائل حملے کیے تھے۔ یہ حملے دوما کے مقام پر شامی فوج کی طرف سے مبینہ طورپر کیمیائی حملے کے رد عمل میں کیے گئے تھے۔ روس نے امریکا اور اس کے اتحادیوں کے شام پر حملوں پر شدید احتجاج کیا تھا۔ دونوں ملکوں کے صدور اور دیگر عہدیداروں کے درمیان تلخ بیانات کا بھی تبادلہ ہوتا رہا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں