.

یمنی حوثیوں نے تیل بردار 19 جہاز یرغمال بنا لیے: سعودی سفیر کی تصدیق

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یمن میں متعیّن سعودی سفیر محمد آل جابر نے اس امر کی تصدیق کی ہے کہ حوثی شیعہ باغیوں نے تیل بردار انیس جہازوں کو روک رکھا ہے اور وہ انھیں الحدیدہ کی بندر گاہ میں داخل نہیں ہونے دے رہے ہیں ۔

آل جابر نے ہفتے کے روز ایک ٹویٹ میں لکھا ہے کہ ’’ ایران کے حمایت یافتہ حوثی شیعہ باغیوں نے تیل بردار 19 جہازوں کو اپنے زیر قبضہ علاقے رمی المخطاف میں روک رکھا ہے اور وہ انھیں الحدیدہ کی بندر گاہ میں داخل ہونے سے روک رہے ہیں ۔ان کی اس حرکت پر یمن کے جامع انسانی امدادی مرکز کو گہری تشویش لاحق ہے‘‘۔

واضح رہے کہ حوثی جنگجوؤں نے تین اپریل کو الحدیدہ کی بندرگاہ کے مغرب میں بحیرہ احمر کے بین الاقوامی پانیوں میں سعودی عرب کے ایک آئیل ٹینکر پر حملہ کیا تھا۔

سعودی عرب کی قیادت میں عرب اتحادی فوج کے ترجمان کرنل ترکی المالکی نے تب ایک بیان میں بتایا تھا کہ اتحاد کے ایک جنگی بحری جہاز نے فوری طور پر مداخلت کرکے حوثی جنگجوؤں کے حملے کی اس کوشش کو ناکام بنا دیا تھا۔

یمن کے مغرب میں بحیرہ احمر پر واقع الحدیدہ کی بندرگاہ پر حوثی شیعہ باغیوں کا کنٹرول ہے ۔بیرون ملک سے یمن میں انسانی امداد لے کر آنے والے بحری جہاز اور تیل بردار ٹینکر اسی بندرگاہ پر لنگر انداز ہوتے ہیں ۔