کرپشن کے الزام میں گرفتار احمدی نژاد کا معاون رہا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

ایران کے سابق صدر محمود احمدی نژاد کے سابق معاون اور مشیر محمد رضا رحمی کو جیل سے رہا کردیا گیا۔ رحیمی کرپشن کے الزامات کے باعث کچھ عرصے سے تہران کی ایک جیل میں قید تھے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق سابق ایرانی صدر محمود احمدی نژاد کے قریبی ساتھی محمد رضا رحیمی کی رہائی گذشتہ روز عمل میں آئی۔ تہران میں ڈائریکٹر جنرل جیل خانہ جات مصطفیٰ محبی نے ایک بیان میں بتایا کہ محمد رضا رحیمی کوضمانت پر رہا کردیا گیا ہے۔ ان پر کرپشن کا الزام عاید کیا گیا تھا اور ایک عدالت سے انہیں اس الزام میں پانچ سال 91 دن قید، قریبا ایک ملین ڈالر کے مساوی رقم قومی خزانے میں جمع کرانے اور اتنی ہی رقم جرمانہ ادا کرنے کی سزا سنائی گئی تھی۔

’ایسنا‘ نیوز ایجنسی سے بات کرتے ہوئے مصطفیٰ محبی نے کہا کہ رحیمی کو تین سال قید کی سزا کاٹنے کے بعد رہا کر دیا گیا ہے۔ ان کی رہائی مشروط طور پر عمل میں لائی گئی ہے۔

خیال رہے کہ احمد رضا رحیمی پر سابق صدر احمدی نژاد کے دورمیں ایران کے بیمہ پروگرام میں گھپلوں اور ہارڈ کرنسی مارکیٹ میں خلل ڈالنے کا الزام عاید کیا گیا تھا۔

ایرانی میڈیا کے مطابق رحمد رضا رحیمی نے اعتراف کیا تھا کہ انہوں نے قومی بیمہ پالیسی میں قریبا سات لاکھ ڈالر کے مساوی رقم خرد بورد کی تھی۔ رحیمی کی گرفتاری اس وقت عمل میں لائی گئی تھی جب سابق صدر اور موجودہ حسن روحانی کے درمیان کرپشن کے الزامات کا تبادلہ شروع ہوا۔ رحیمی کا کرپشن کیس احمدی نژاد کے دور کا سب سے بڑا کرپشن اسکینڈل بتایاجاتا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں