.

ایران کے ساتھ جوہری معاہدے پر قائم ہیں: یورپی یونین

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یورپی یونین نے امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی جانب سے ایران کے ساتھ سنہ 2015ء میں طے پائے جوہری معاہدے سے علاحدگی کے اعلان کو مسترد کر دیا ہے اور متفقہ طورپر موقف اختیار کیا ہے کہ یورپی یونین ایران کے ساتھ طے پائے معاہدے کی پابندی کرے گی۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق یورپی یونین کی خارجہ امور کی سربراہ فیڈریکا موگرینی نے ایک بیان میں کہا کہ یورپی یونین ایران کے ساتھ طے پائے معاہدے کی شرائط کی پابندی کرے گی اور ہم اپنے اقتصادی مفادات کے تحفظ اور دفاع کے لیے ہرممکن اقدام کریں گے۔

ایک پریس کانفرنس سے خطاب میں موگرینی نے کہا کہ جوہری معاہدہ ہم سب کی مشترکہ ملکیت ہے اور ہم اس کی حفاظت کریں گے۔ عالمی برادری کو ایران کے ساتھ طے پائے معاہدے کی پابندی کو یقینی بنانا چاہیے۔

ادھر برطانیہ، جرمنی اور فرانس نے اپنے الگ الگ بیانات میں امریکی حکومت کی طرف سے جوہری سمجھوتے سے علاحدگی کے اعلان پر تنقید کی ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ امریکا کی طرف سے جوہری معاہدے سے علاحدگی کا اعلان ایک نئی رکاوٹ کھڑی کرنے کی کوشش ہے۔ امریکا کو ایسا کرنے سے سختی سے گریز کرنا چاہیے۔

امریکی صدر کے ڈونلڈ ٹرمپ کے اعلان کے بعد فرانسیسی صدر عمانویل میکروں اور جرمن چانسلر انجیلا میرکل نے ٹیلیفون پر اس معاملے پر تبادلہ خیال کیا ہے۔

خیال رہے کہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے ایران کے ساتھ سنہ 2015ء میں طے پائے جوہری معاہدے سے علاحدگی کا اعلان کیا ہے۔ ان کے اس اعلان پر عالمی برادری کی طرف سے شدید ردعمل سامنے آیا ہے۔