.

یواے ای کی اعلیٰ پیشہ ور افراد ، سرمایہ کاروں اور طلبہ کو 10 سالہ اقامتی ویزوں کی پیش کش

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

متحدہ عرب امارات نے سرمایہ کاروں ، پیشہ ور حضرات ( ڈاکٹروں اور انجنیئروں ) اور ان کے خاندانوں کے علاوہ اے گریڈ کے حامل طلبہ کو دس سال کی مدت کے اقامتی ویزے جاری کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

یو اے ای کی کابینہ نے یہ فیصلہ دبئی کے حکمراں شیخ محمد بن راشد آل مکتوم کے زیر صدارت اتوار کو ایک اجلاس میں کیا ہے۔کابینہ نے بین الاقوامی سرمایہ کاروں کو یو اے ای میں کاروبار کی 100 فی صد غیرملکی ملکیت دینے کے فیصلے کی بھی منظوری دی ہے۔

شیخ محمد بن راشد نے اس موقع پر کہا کہ ’’ ہمارا کھلا ماحول ، رواداری پر مبنی اقدار ، انفرااسٹرکچر اور لچک دار قانون سازی بین الاقوامی سرمایہ کاری اور غیرمعمولی ٹیلنٹ کو راغب کرنے کا بہتر ماحول فراہم کرتے ہیں ‘‘۔

انھوں نے مزید کہا کہ ’’ یو اے ای بدستور مواقع کی سرزمین ہے ، وہ انسانی خوابوں کو شرمندۂ تعبیر کرنے کے لیے بہتر ماحول اور غیر معمولی صلاحیتوں کو جلا بخشنے اور انھیں بروئے کار لانے کا موقع فراہم کرتا ہے‘‘۔

دبئی میڈیا آفس کی جانب سے ٹویٹر پر جاری کردہ ایک بیان کے مطابق شیخ محمد نے متعلقہ حکومتی اداروں کو ان فیصلوں پر 2018ء کے اختتام سے قبل عمل درآمد کی ہدایت کی ہے۔ انھوں نے تعلیم مکمل کرنے والے ایسے طلبہ کے ویزوں کی میعاد میں توسیع کا بھی حکم دیا ہے جنھیں ان کے والدین نے اسپانسر کیا تھا تاکہ وہ اس عرصے کے دوران میں اپنے مستقبل کے بارے میں کوئی فیصلہ کرسکیں ۔